ناسا کے خلائی جہاز نیو ہورائزنز کی جانب سے سگنل موصول

ناسا کے خلائی جہاز نیو ہورائزنز کی جانب سے سگنل موصول

  

واشنگٹن(کے پی آئی)امریکی خلائی ادارے ناسا کے خلائی جہاز نیو ہورائزنز کی جانب سے سگنل موصول ہوا ہے کہ اس کا نظام شمسی کے آخری سیارے پلوٹو کے قریب سے سفر مشن کے عین مطابق ہوا ہے۔خلائی جہاز سے ملنے والے پہلے پیغام سے معلوم چلا ہے کہ پلوٹو کے قریب سے 14 کلومیٹر فی سیکنڈ کی رفتار سے نیو ہورائزنز کا سفر مشن کے مطابق ہوا ہے۔خلائی جہاز پلوٹو کے قریب پہنچ گیا۔نیو ہورائزنز کی جانب سے یہ پیغام میڈرڈ میں امریکی خلائی ایجنسی ناسا کے مواصلاتی اینٹینا کو ملا۔یہ پیغام 4.7 بلین کلومیٹر دور سے زمین تک پہنچنے میں چار گھنٹے اور 25 منٹ لگے۔اس مشن کے ہیڈکوارٹر میری لینڈ کے شہر لوریل میں سائنسدانوں اور انجینیئرز کے چہروں پر پریشانی عیاں تھی جب تک خلائی جہاز سے کوئی پیغام موصول نہیں ہوا۔ جب ایک بج کر 53 منٹ بی ایس ٹی پر پیغام ملا تو مشن ہیڈ کوارٹر میں خوشی کی لہر دوڑ گئی۔مشن آپریشن کی مینیجر ایلس بومین نے کہاکہ خلائی جہاز بالکل ٹھیک ہے، ہم نے پلوٹو نظام کی معلومات ریکارڈ کی ہیں اور اب خلائی جہاز پلوٹو نظام سے باہر کی جانب جا رہا ہے۔سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ جو معلومات ملی ہیں وہ صرف انجینیئرنگ کے حوالے سے ہیں اور اس کا مقصد مشن کنٹرول کو مطلع کرنا ہے کہ پلوٹو کے قریب سے سفر مشن کے مطابق ہوا ہے یا نہیں۔یاد رہے کہ نیو ہورائزنز ساڑھے نو برس میں پانچ ارب کلومیٹر کا سفر طے کر کے پلوٹو تک پہنچا ہے۔نیو ہورائزنز منگل 14 جولائی کو گرینچ کے معیاری وقت کے مطابق صبح 11 بج کر 50 منٹ پر اس سیارے کے قریب ترین پہنچا اور اس کا پلوٹو سے فاصلہ صرف 12500 کلومیٹر تھا۔

اس سے قبل خلائی ادارے نے اس بونے سیارے کے قریب سیگزرنے کے دوران کھینچی تفصیلی تصاویر نشر کیں۔پلوٹو سے فاصلہ صرف 12500 کلومیٹر کے فاصلے سے گزرتے ہوئے نیو ہورائزنز اس بونے سیارے کی تفصیلی تصاویر کھینچیں اور اس کے بارے میں دیگر سائنسی معلومات اکٹھی کیں۔نیو ہورائزنز کا 2370 کلومیٹر چوڑے پلوٹو کے قریب سے گزرنا خلا کو جاننے کی تاریخ کا انتہائی اہم لمحہ ہے۔

مزید :

عالمی منظر -