متحدہ اور تحریک انصاف کی قانونی جھڑپیں ،پورا دن درخواستیں ،یاد داشتیں اور قرار دادیں جمع کراتے گزارا

متحدہ اور تحریک انصاف کی قانونی جھڑپیں ،پورا دن درخواستیں ،یاد داشتیں اور ...

  

 کراچی (اے این این، این این آئی)تحریک انصاف کے متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کیخلاف مقدمہ کی درخواست دینے کے بعد ایم کیوایم نے بھی درخشاں تھانے میں عمران خان کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کے لئے درخواست جمع کرا دی ہے۔ گزشتہ روز پاکستان تحریک انصاف کے رہنماؤں نے درخشاں تھانہ کلفٹن میں ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کے خلاف مقدمہ دائر کرنے کی درخواست جمع کرا دی ہے۔ اس موقع پر تحریک انصاف کے رہنما علی زیدی نے کہا کہ ایم کیو ایم نے اپنے کارکنوں سے، قلم کے بجائے بندوق کی سیاست کرائی۔ رینجرز اور پاک فوج کے خلاف نازیبا زبان کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی۔ الطاف حسین کے خلاف لندن بھی جانا پڑاتو جائیں گے۔ اس موقع پر تحریک انصاف کے رہنما فیصل واڈا نے کہا کہ ایم کیو ایم زکوۃ، خیرات کا پیسہ منی لانڈرنگ کے لئے استعمال کرتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایم کیو ایم پر پابندی لگنی چاہیے۔دوسری جانب تحریک انصاف کی الطاف حسین کیخلاف مقدمہ کی درخواست کے جواب میں ایم کیو ایم نے بھی عمران خان کیخلاف مقدمہ کے اندراج کیلئے درخشاں تھانے میں ہی درخواست جمع کرائی ہے ۔ کراچی کے درخشاں تھانے میں مقدمہ کے اندراج کی درخواست کے ساتھ ساتھ ایم کیو ایم کے رہنما علی رضا عابدی نے عمران خان کا وڈیو ریکارڈبھی جمع کرایا۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عمران خان نے فوجی جرنیلوں کے خلاف بات کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم آصف علی زرداری، خواجہ آصف، نواز شریف سمیت ان تمام رہنماؤں کے خلاف پر چے کٹوائے گی، جنھوں نے کبھی نہ کبھی فوج کے خلاف بات کی ہے اور ان کے ثبوت بھی دیئے جائیں گے۔ دوسری جانب متحدہ قومی موومنٹ نے تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کے خلاف بدھ کو برطانوی ہائی کمیشن میں ایک یادداشت جمع کرادی۔ یہ یادداشت ایم کیو ایم کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار اور نسرین جلیل نے برطانوی ہائی کمیشن میں جمع کروائی۔ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ڈاکٹرفاروق ستار نے کہا کہ پی ٹی آئی نے ایم کیو ایم کے خلاف جھوٹے الزامات پر مبنی یادداشت برطانوی ہائی کمیشن میں جمع کروائی ہے اس کے جواب میں ایم کیو ایم نے برطانوی ہائی کمیشن اور امریکی قونصل خانے میں یادداشتیں جمع کرائی ہیں۔ ان یادداشتوں میں عمران خان کے بارے میں امریکی اور برطانوی حکومت کو آگاہ کیا ہے۔ عمران خان کی سیاست جھوٹ پر مبنی ہے۔ ان کے خلاف مقدمہ امریکی عدالتوں میں ہے۔ برطانوی عدالتوں کا کس طرح سامنا کریں گے۔ عمران خان عدالتوں سے گھبراتے ہیں، اس لئے عدالتوں میں پیش نہیں ہوتے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی ایم کیو ایم پر جھوٹے الزامات لگا رہی ہے۔ ہم ان الزامات کا بھرپور جواب دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ الطاف حسین نے جو حالیہ گفتگو کی ہے وہ نجی پروگرام میں کی ہے۔ فوج کے حوالے سے خواجہ آصف اور عمران خان نے متعدد بیانات دیئے ہیں۔ سب کے خلاف یکساں کارروائی ہونی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ صورت حال کا جائزہ لے رہے ہیں۔ ہم قانونی اور آئینی انداز میں تمام صورت حال کا سامنا کریں گے۔

کراچی ( سٹاف رپورٹر) تحریک انصاف نے متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین کی جانب سے افواج پاکستان اور رینجرز کے خلاف متنازعہ تقریر کرنے کے خلاف سندھ اسمبلی میں مذمتی قرارداد جمع کرادی ۔ قرارداد بدھ کو تحریک انصاف کے ارکان سندھ اسمبلی ثمر علی خان ،خرم شیرزمان اور سید حفیظ الدین نے قائم مقام سیکرٹری سندھ اسمبلی سید حسن شاہ کے پاس جمع کرائی ۔اس موقع پر پی ٹی آئی کے رہنما ڈاکٹرعارف علوی بھی موجود تھے ۔مذمتی قرارداد میں کہا گیا ہے کہ الطاف حسین برطانیہ کے شہری ہیں۔وہ برطانیہ میں بیٹھ کر پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت کررہے ہیں اور پاکستان کی سکیورٹی اداروں کے خلاف متنازعہ تقریر کررہے ہیں ۔انہوں نے جو حالیہ تقریر کی وہ غیر مناسب ہے ۔اس لیے اس قرارداد کے ذریعے ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ یہ معاملہ سندھ اسمبلی کے آئندہ اجلاس میں لایا جائے ۔سندھ حکومت وفاقی حکومت سے مطالبہ کرے کہ وہ برطانوی حکومت سے رابطہ کرے ۔الطاف حسین کے خلاف کارروائی کی جائے اور برطانیہ کو کہا جائے کہ وہ اپنے شہری الطاف حسین کو ایسی تقاریر کرنے سے روکے ۔بعد ازاں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ڈاکٹرعارف علوی نے کہا کہ الطاف حسین برطانوی شہری ہیں ۔وہ پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت کرتے ہیں ۔کراچی کے حالات خراب کرنے کی ذمہ دار ایم کیو ایم ہے ۔انہوں نے کہا کہ برطانوی حکومت کا فرض بنتا ہے کہ وہ اپنے شہری الطاف حسین کو پابند کرے کہ وہ پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت بند کریں ۔جبکہ متحدہ قومی موومنٹ نے تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان اور کے الیکٹرک کی جانب سے کراچی میں لوڈشیڈنگ کے خلاف دو الگ الگ قراردادیں سندھ اسمبلی میں جمع کرادی ہیں ۔یہ قراردادیں ایم کیو ایم کے ارکان سندھ اسمبلی معین عامر پیرزادہ ،محمد حسین اور سید خالد احمد نے جمع کرائیں ۔ مذمتی قرارداد میں کہا گیا ہے کہ عمران خان نے ایک نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں پاک فوج کے افسران کے خلاف توہین آمیز جملے استعمال کیے جو ریاستی اداروں کی توہین اور ان پر حملے کے مترادف ہے ۔ایم کیو ایم اس مذمتی قرارداد سے ذریعے مطالبہ کرتی ہے کہ اس معاملے کو سندھ اسمبلی میں لایا جائے اور اسمبلی کے ذریعے سندھ حکومت وفاقی حکومت کو سفارش کرے کہ عمران خان کے خلاف آرٹیکل 6کے تحت غداری کا مقدمہ چلایا جائے اور آئین کے آرٹیکل 62,63کی خلاف ورزی پر انہیں قومی اسمبلی کی رکنیت سے نااہل قرارد یا جائے ۔دوسری مذمتی قرارداد میں کے الیکٹرک کی انتظامیہ کی نااہلی سے یکم جولائی سے 15جولائی تک کراچی میں چار بڑے بجلی کے بریک ڈاؤن ہوئے ہیں جس کی وجہ سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے ۔شہریوں کے معمولات زندگی شدید متاثرہوئے ہیں اور کاروباری سرگرمیوں پر بھی اس کے منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں ۔اس لیے اس مذمتی قرارداد کے ذریعے مطالبہ کیا جاتا ہے کہ کے الیکٹرک کا معاملہ سندھ اسمبلی میں لایا جائے اور سندھ حکومت وفاقی حکومت سے مطالبہ کرے کہ وہ کے الیکٹرک کے خلاف سخت کارروائی کرے اور انہیں پابند کیا جائے کہ غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ بند کیا جائے ۔سسٹم کو اپ گریڈ کیا جائے اور اس پر چیک اینڈ بیلنس کا نظام قائم کیا جائے ۔بعد ازاں عامر معین پیرزادہ اور محمد حسین نے کہا کہ ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین محب وطن پاکستانی ہیں ۔ایم کیو ایم قانون کا احترام کرنے والی جماعت ہے ۔الطاف حسین کے خلاف حالیہ مقدمات کے اندراج کی ہم مذمت کرتے ہیں ۔ایم کیو ایم نے پہلے بھی فوج کے ساتھ تھی اور اب بھی فوج کے ساتھ ہے ۔ایم کیو ایم کا تعلق پاکستان بنانے والے لوگوں سے ہے ۔ہم بانیان پاکستان کی اولاد ہیں ۔

مزید :

صفحہ اول -