کیا کورونا وائرس حاملہ عورت سے پیٹ میں موجود بچے کو منتقل ہوسکتا ہے؟

کیا کورونا وائرس حاملہ عورت سے پیٹ میں موجود بچے کو منتقل ہوسکتا ہے؟
کیا کورونا وائرس حاملہ عورت سے پیٹ میں موجود بچے کو منتقل ہوسکتا ہے؟

  

روم (ڈیلی پاکستان آن لائن) کیا کورونا وائرس حاملہ عورت سے پیٹ میں موجود بچے کو منتقل ہوسکتا ہے؟ یہ وہ سوال ہے جس کا جواب سائنسدانوں نے حاصل کرلیا ہے۔ بہت سے وائرس ایسے ہیں جو پلیسنٹا کو پار کرکے رحم میں موجود بچے تک پہنچ جاتے ہیں اور چند ایک کیسز میں سامنے آیا ہے کہ کورونا بھی پلیسنٹا کو کراس کرلیتا ہے۔

اٹلی کے سائنسدانوں نے 31 ایسی خواتین پر تحقیق کی جو کورونا وائرس سے متاثر تھیں۔ ان خواتین نے مارچ اور اپریل میں بچوں کو جنم دیا ۔ سائنسدانوں نے جب ان خواتین کا معائنہ کیا تو خون، پلیسنٹا اور ماں کے دودھ میں کورونا کی موجودگی پائی گئی۔

ایک نومولود بچے میں اس لیے کورونا وائرس منتقل ہوا کیونکہ اس کی ماں کے پلیسنٹا میں یہ وائرس پایا گیا تھا۔ ایک اور بچے میں ایسے اینٹی باڈیز موجود تھے جس کی وجہ سے کورونا وائرس پلیسنٹا تک نہیں پہنچ پایا۔

فرانس سے سامنے آنے والی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ رحمِ مادر میں بھی بچوں کو کورونا منتقل ہوسکتا ہے کیونکہ ایک نومولود بچے میں کورونا کی شدید علامات پائی گئی تھیں۔

تحقیق میں شامل یہ تمام خواتین ایسی تھیں جو اپنے حمل کے آخری دنوں میں تھیں، سائنسدان ابھی تک اس بات کا جواب ڈھونڈ رہے ہیں کہ اگر حمل کے ابتدائی دنوں میں کسی خاتون کو کورونا ہوجائے تو اس کا بچے پر کیا اثر پڑے گا۔

مزید :

کورونا وائرس -