پی ایم اے پنجاب نے مراکز صحت این جی اوز کو ٹھیکے پر دینے کا حکومتی فیصلہ مسترد کر دیا

پی ایم اے پنجاب نے مراکز صحت این جی اوز کو ٹھیکے پر دینے کا حکومتی فیصلہ ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 لاہور( جنرل رپورٹر)پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن پنجاب نے محکمہ صحت حکومت پنجاب کی طرف سے صوبہ کے 10 اضلاع کے مراکز صحت مختلف این جی اوز کو ٹھیکے پر دینے کے فیصلے کو مسترد کر دیا ہے اور اس حکومتی فیصلے کے خلاف بھرپور انداز میں احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کر دیا ہے اور کہا ہے کہ بنیادی مراکز صحت، دیہی مراکز صحت، تحصیل اور ڈسٹرکٹ ہسپتالوں کو ٹھیکے پر دینے کی بجائے محکمہ صحت کی اس افسر شاہی کو فارغ کر دیا جائے جو یہ سسٹم چلانے میں ناکام ہو گئی ۔ اس امر کا اظہار پی ایم اے کے عہدیداروں پروفیسر ڈاکٹر محمد اشرف نظامی مرکزی صدر، پنجاب کے صدر ڈاکٹر مہر محمد اقبال، صدر الیکٹ پنجاب ڈاکٹر اظہار احمد چوہدری، پی ایم اے لاہور کے صدر ڈاکٹر محمد تنویر انور، پنجاب کے جنرل سیکریٹری ڈاکٹر ملک شاہد، پی ایم اے پنجاب کی جائنٹ سیکریٹری ڈاکٹر تحسینہ ظفراور ڈاکٹر ارم شہزادی نے ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں کیا۔ عہدیداروں نے کہا کہ کی صوبائی مجلس عاملہ نے اپنے ہنگامی اجلاس میں متفقہ طور پر حکومت کی طرف سے ابتدائی طور پر 10اضلاع میں صحت کی سہولیات کو (Out Source) ٹھیکہ پر دینے کے فیصلہ کو یکسر مسترد کر دیا ہے اور قرار دیا ہے کہ بیوروکریسی محکمہ صحت کو چلانے میں بری طرح ناکام ہو چکی ہے۔اس حوالے سے ڈاکٹر اشرف نظامی نے کہا کہ یہ بات قابل ذکر ہے کہ ماضی میں بھی پی ایم اے نے کنٹریکٹ سسٹم اور خودمختاری سے ہونے والے تباہ کن اثرات سے حکومت کو بارہا آگاہ کیا اور اپنے اصولی موقف پر قائم رہی اور جب محکمہ تباہی کے کنارے پر پہنچ گیا تو حکومت نے 10سال بعد پی ایم اے کے مؤقف کو تسلیم کرتے ہوئے 2009میں محکمہ کو بچانے کیلئے مستقل ملازمت کا سلسلہ دوبارہ شروع کیا مگر اس نقصان کی تلافی کو بہت وقت لگے گا۔پی ایم اے پنجاب کے صدر ڈاکٹر مہر محمد اقبال نے کہا کہ انتہائی افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ حکومت نے 12 اضلاع میں PRSP کے ناکام تجربے کے بعد بھی (جس کا اعتراف تمام مقتدر حلقوں نے برملا کیا ہے )ایک مرتبہ پھر اپنے پیاروں کو نوازنے کیلئے پورے صحت کے نظام کو ٹھیکہ پر دینے پر تُل گئی ہے جس کے انتہائی بھیانک نتائج ہوں گے اور اس کا خمیازہ غریب عوام کو بھگتنا پڑے گا۔ ڈاکٹر اظہار چوہدری، ڈاکٹر کامران سعید اور ڈاکٹر شاہد ملک نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ آج بیوروکریسی نے کھلم کھلا اپنی ناکامی کا اعتراف کر لیا ہے اور محکمہ صحت کے معاملات کوچلانے سے " ہاتھ کھڑے کر دیئے ہیں۔ اس حوالے سے مختلف سوالات کے جواب میں پی ایم اے کے عہدیداروں نے کہا کہ حکومت اپنا یہ فیصلہ واپس لے اگر حکومت نے 10اضلاع کو ٹھیکے پر دیا تو بھرپور احتجاج کریں گے اور اس کیلئے دھرنے ہونگے، سیمینار ہونگے، احتجاجی ریلیاں ہونگی۔ اگر جلاؤ گھراؤ کرنا پڑا تو بھی گریز نہیں کریں گے۔ اس کیلئے ینگ ڈاکٹرز، سیاستدانوں، سول سوسائٹی کو ساتھ ملایا جائے گا۔

پی ایم اے پنجاب

مزید :

صفحہ آخر -