افغان طالبان اور داعش کے حامیوں کی لڑائی شدت اختیار کرگئی

افغان طالبان اور داعش کے حامیوں کی لڑائی شدت اختیار کرگئی
افغان طالبان اور داعش کے حامیوں کی لڑائی شدت اختیار کرگئی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

کابل(ویب ڈیسک) افغانستان کے مشرقی علاقوں سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق طالبان اور دولت اسلامیہ کے حامیوں کے مابین شدید لڑائی کی وجہ سے مقامی آباد نقل مکانی پر مجبور ہوگئی ہے، جھڑپوں کا یہ سلسلہ گذشتہ کئی ہفتے سے جاری ہے اور ان کی وجہ سے ن قل مکانی کرکے جلال آباد پہنچنے والے افراد کا کہنا ہے کہ یہ جھڑپیں اتنی شدید ہیں کہ لگتا ہے کہ علاقے میں کوئی انقلاب آگیا ہے۔ افغان حکام کا کہنا ہے کہ دونوں شدت پسند تنظیموں کے درمیان حالیہ لڑائی میں اب تک سو افراد مارے جاچکے ہیں، حال ہی میں افغانستان میں شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کے ایک رہنما مولودی عبدالرحیم مسلم دوست نے بی بی سی نیوز سے خصوصی بات چیت میں کہا تھا کہ انکے افغان طالبان کے خلاف ہتھیاڑ اٹھانے کی ایک وجہ ان کا ہمسایہ ملک پاکستان کے مفادات کیلئے کام کرنا بھی ہے، افغان حکومت تسلیم کرچکی ہے کہ دولت اسلامیہ افغانستان میں فعال ہے، نامعلوم مقام سے انٹرویو دیتے ہوئے مولودی مسلم نے الزام لگایا تھا کہ افغان طالبان پر پاکستان کے اثر و رسوخ کی وجہ سے طالبان نے اپنا اصل ہدف پس پشت ڈال دیا ہے۔ دریں اثناء افآن وزارت داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران ملک کے مختلف علاقوں میں سیکیورٹی فورسز کے آپریشن میں 94 طالبان ہلاک اور 49زخمی ہوگئے۔