اقتصادی راہداری کی وجہ سے سرمایہ کاری کی صورتحال میں معمولی بہتری آئی :شاہدرشید

اقتصادی راہداری کی وجہ سے سرمایہ کاری کی صورتحال میں معمولی بہتری آئی ...

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )اسلام آباد چیمبر آف سمال ٹریڈرز کے سرپرست شاہد رشید بٹ نے کہا ہے کہ اقتصادی راہداری کی وجہ سے سرمایہ کاری کی صورتحال میں معمولی بہتری آئی ہے جس میں کم از کم بیس سال تک اضافہ ہو تا رہے گا۔ اس سے ملک میں سرمایہ کاری کی مجموعی صورتحال پر مثبت اثرات مرتب ہونگے۔ انھوں نے کہا کہ گزشتہ سال سرمایہ کاری کا ٹارگٹ جو 17.7 فیصد تھا حاصل نہیں کیا جا سکا ہے مگر یہ 15.6 فیصد سے بڑھ کر 15.8 فیصد ہو گئی ہے جسکی رفتار بڑھانے کی ضرورت ہے۔ شاہد رشید بٹ نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہ ملک میں سرمایہ کاری کی صورتحال جی ڈی پی کی ترقی میں رکاوٹ بنی ہوئی ہے جسے دور کرنے کیلئے اہم اقدامات کی ضرورت ہے۔سرمایہ کاری کا تناسب کم از کم بیس فیصد ہونا چائیے تاکہ جی ڈی پی بڑھنے کی رفتار تسلی بخش ہو سکے۔ انھوں نے کہا کہ فکسڈ انوسٹمنٹ کا ہدف جو 16.1 فیصد تھا حاصل نہیں کیا جا سکا ہے تاہم یہ 14 فیصد سے بڑھ کر 14.2 فیصد ہو گئی ہے۔ انھوں نے کہا کہ پرائیویٹ انوسٹمنٹ کا ہدف 12.2 فیصد رکھا گیا تھا جو 10.2 فیصد سے کم ہو کر 9.9 فیصد ہو گئی ہے۔سرمایہ کاری کے علاوہ ملک میں قومی بچت کی شرح قابل اطمینان نہیں ہے جسکا ہدف 16.3 فیصد تھا مگر یہ 13.1 فیصد رہی کیونکہ بینک اپنے منافع کی دوڑ میں کھاتہ داروں کو منفی منافع دے رہے ہیں۔ اگر حکومت اپنے وعدوں کے مطابق پاکستان سٹیل ملز، پی آئی اے اور پاور کمپنیوں کی نجکاری کر دیتی تو سرمایہ کاری بڑھ سکتی تھی مگر ان فیصلوں پر عمل درامد نہیں کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ سیاسی عدم استحکام اور توانائی بحران کم ہوتے ہی ملک میں ملکی و غیر ملکی سرمایہ کاری بڑھ سکتی ہے۔

 

مزید : کامرس