حکومت کو گرانے کیلئے اپوزیشن نے حقیقی کردار ادا نہیں کیا: فضل الرحمن

    حکومت کو گرانے کیلئے اپوزیشن نے حقیقی کردار ادا نہیں کیا: فضل الرحمن

  

اسلام آباد(آئی این پی)مولانا فضل الرحمان نے اپوزیشن جماعتوں سے شکوہ کرتے ہوئے کہاہم بار بار کہتے رہے کہ حکومت کو اس بجٹ سے قبل ہی اتار دینا چاہیے۔ اپوزیشن نے بھی وہ کردار ادا نہیں کیا جو ادا کرنا چا ئیے اب وقت آ گیا ہے کہ سیاسی جماعتیں اور اسٹیبلشمنٹ ملک کو بچانے کے لئے اس حکومت سے جان چھڑائیں۔اپنوں سے شکوہ ہوتا ہے حکومت کا قائم رہنا اپوزیشن جماعتوں کی ناکام کارکردگی کی وجہ ہے۔ قوم اور سیاسی جماعتی حکومت کو جلد گرا کر دکھائیں گے۔انہوں نے کہا ہے کہ موجودہ مالی سال کا بجٹ مکمل طور پر ناکام تعین بجٹ ہے جس میں معاشی ترقی، تعلیم اندرونی اور بیرونی خدشات کو مدنظر نہیں رکھا گیا۔(ن) لیگ کے حکومت نے جو آخری بجٹ دیا تھا اس میں شرح نمو 6 فیصد دی تھی جبکہ موجودہ حکومت ہر معاملے میں ناکام ہو چکی ہے۔ وفاقی بجٹ سے متعلق صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بجٹ میں سالانہ شرح نمو 0.4 بتایا گیا ہے۔پاکستان کے تاریخ میں کبھی جی ڈی پی کی شرح زیرو پر نہیں آئی ہے،حکومت اپنی تمام تر ناکامیاں کورونا کے پیچھے چھپانے کی کوشش کر رہی ہے۔حکومت پر عدم اعتماد کی وجہ سے عوام ٹیکس ادا نہیں کر رہی ہے۔ عوام کو پتہ ہے کہ حکومت کا کوئی بھروسہ نہیں کہ ان کا ٹیکس کہاں استعمال کیا جائے گا۔موجودہ حکومت کی زراعت اور صنعت آخری سانسیں لے رہے ہیں۔ نیا پاکستان بنانے کے نعرے کے پیچھے ملک و قوم کے ساتھ دھوکہ ہوا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ قومی وسائل کو استعمال میں نہیں لایا جا رہا۔دو سالوں میں قرضوں جتنا قرضہ لیا گیا اتنا شاید پاکستان کے تاریخ میں لیا گیا ہو۔ملک کی کشتی آخری ہچکولے کھا رہی ہے تاریخ بڑی بے رحم ہے اپنی یاد دلاتی رہتی ہے جس ملک کی معیشت زوال پذیر ہو جائے تو اس کو سنبھالنا مشکل ہوجاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ صوبوں کو طے شدہ حصہ مقررہ وقت پر نہیں ادا کیا جاتا۔صوبوں کو اپنے اخراجات پورے کرنا ناممکن نظر آ رہا ہے جبکہ وفاق سے کسی خیر کی توقع بھی نہیں کی جاسکتی ہے۔

مولانا فضل الرحمن

مزید :

صفحہ آخر -