ملازمین کو ایک ماہ کے نوٹس پر برطرف کرناروٹی چھیننے کے مترادف ہے: اسفند یارولی

ملازمین کو ایک ماہ کے نوٹس پر برطرف کرناروٹی چھیننے کے مترادف ہے: اسفند ...

  

پشاور(پ ر)عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت کی جانب سے 9ہزار سے زائد ملازمین کو ایک ماہ کی نوٹس پر برطرف کرنا مزدوروں سے روٹی چھیننے کے مترادف ہے جسکی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔باچاخان مرکز پشاور سے جاری بیان میں اے این پی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے سٹیل ملز کے قریباً 9ہزار سے زائد ملازمین کی برطرفی کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر ادارے خسارے میں ہیں تو اس میں مزدوروں کا کیا قصور؟ادارے تباہ کرنیوالوں کو کٹہرے میں لایا جائے۔انہوں نے وفاقی وزیر اسدعمر کو یاد دلایا کہ شاید وہ انہی مزدوروں کے سامنے کی گئی تقریر بھول چکے ہیں جنہوں نے دعویٰ کیا تھا کہ انکی حکومت آئی تو سٹیل مل دوبارہ چلا کر دکھائیں گے۔ اب وہ وعدہ اور دعویٰ کہاں گیا؟ اے این پی سربراہ نے کہا کہ حکومت فیصلہ کرچکی ہے کہ آپریشنل کنٹرول پرائیویٹ سرمایہ کار کو دی جائیگی، یہاں ترجیحات واضح ہیں یعنی اب سرمایہ کاروں کو نوازنے کی پوری تیاری کی جاچکی ہے۔ سٹیل ملز بارے 671 کے قریب مقدمات عدالتوں میں ہیں۔اے این پی ہر فورم پر ملازمین کے ساتھ کھڑی رہے گی۔ انہوں نے اس مزدور دشمن فیصلے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ہر محاذ پر مزدوروں کے حقوق کیلئے اے این پی آواز اٹھاتی رہے گی۔ 9ہزار سے زائد ملازمین کو ایک ماہ کی نوٹس پر برطرف کرنا مزدوروں سے روٹی چھیننے کے مترادف ہے۔ ایک کروڑ نوکریاں دینے والوں نے لاکھوں لوگ بے روزگار کردیے ہیں۔ مزدوروں کی برطرفیاں کرنے والے وزراء اور مشیروں کی فوج دراصل قومی خزانے پر بوجھ ہیں۔ حکومتی شراکت دار مافیاوں کیلئے مالی امدادی پیکج اور مزدور کے منہ سے روٹی کا نوالہ چھینا جارہا ہے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -