اٹلی میں 18 سالہ پاکستانی لڑکی کے قتل کیس کی تحقیقات میں اہم پیشرفت

اٹلی میں 18 سالہ پاکستانی لڑکی کے قتل کیس کی تحقیقات میں اہم پیشرفت
اٹلی میں 18 سالہ پاکستانی لڑکی کے قتل کیس کی تحقیقات میں اہم پیشرفت

  

میلان (سید وجاہت بخاری) اٹلی میں 18 سالہ پاکستانی لڑکی سمن عبّاس کے قتل کیس میں اہم پیشرفت سامنے آگئی۔ سمن  کو مبینہ طور پر شادی سے انکار پر قتل کیا گیا تھا۔

 مقتولہ کے والدین اس کی شادی پاکستان میں ایک بوڑھے آدمی سے کرنا چاہتے تھے جس کو وہ نہیں جانتی تھی۔ سمن عباس کی والدہ نے اسے ایک ٹیکسٹ میسج  بھیجا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ "براہ کرم رابطہ کرو، گھر آؤ، ہم مر رہے ہیں، واپس آؤ، تم جیسا کہو گی ہم ویسا ہی کریں گے۔"

اطالوی میڈیا میں اس خدشے کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ سمن عباس کو اس کے چچا دانش حسنین نے گلا گھونٹ کر قتل کردیا اور اہل خانہ نے اس کی لاش کہیں غائب کردی جس کا ابھی تک پتہ نہیں چل سکا ہے۔

ملزم حسنین کے بارے میں خیال ہے کہ وہی اصل قاتل ہے اور اپنے  کزن نعمان الحق اور چچا کے ہمراہ یورپ میں کہیں روپوش ہو گیا ہے ۔ اس کیس میں اب تک ایک ملزم اکرام اعجاز کو گرفتار کیا گیا ہے۔ وہ فرانس میں 28 مئی کو سپین پہنچنے کی کوشش کے دوران گرفتار ہوا تھا۔ 

اٹلی کی اسلامی کمیونٹیز کی یونین یو سی او آئی نے سمن کے معاملے کے بعد منظم شادیوں پر پابندی عائد کردی ہے۔

مزید :

تارکین پاکستان -