امریکہ، شرح سود میں0.25فیصد اضافہ یورپی ایشیائی سٹاک مارکیٹس گر گئیں

امریکہ، شرح سود میں0.25فیصد اضافہ یورپی ایشیائی سٹاک مارکیٹس گر گئیں

نیویارک ( نیٹ نیوز) امریکی مرکزی بینک نے شرح سود میں0.25 فیصد اضافہ کردیا ہے جس کے بعد عالمی سطح پرسٹاک مارکیٹ، کرنسیز ، خام تیل اور سونے کی قیمتوں میں کمی دیکھی گئی ہے۔ فیڈرل ریزرو کے مطابق پالیسی ریٹ صفراعشاریہ پانچ فیصد سے صفراعشاریہ سات پاچ فیصد کے درمیان ہوگا۔ فیڈرل ریزرو کی چیئر پرسن جینٹ یلین نے آئندہ سال مزید تین بارشرح سود میں اضافہ کرنے کا عندیہ دیا ہے۔ دوسری جانب فیڈرل اوپن مارکیٹ کے ارکان نے مستقبل قریب میں اشیاکی قیمتوں کے بڑھنے اورافراط زر کے اضافے کا بھی اشارہ دیا ہے۔ کمیٹی کا خیال ہے کہ اگلے سال شرح سود میں مزید اضافہ ہوسکتا ہے، جبکہ 2017ء میں یہ مزید تین بار بڑھائی جا سکتی ہے، اس اضافے کے ساتھ یہ شرح 1.4 فیصد تک پہنچ جائے گی۔ امریکی مرکزی بینک کے اس فیصلے سے عالمی اسٹاک مارکیٹس ڈگمگا گئیں، امریکہ، یورپی اور ایشیائی سٹاک مارکیٹس میں مندی ریکارڈ کی گئی، خام تیل کی قیمت بھی کم ریکارڈ کی گئی، ڈالر کے علاوہ تمام اہم کرنسیوں کی قدر میں نمایاں کمی ہوئی۔ شرح سود میں یہ اضافہ سونے پربجلی بن کرگرا ہے، عالمی منڈی میں سونے کی قیمت دس ماہ کی کم ترین سطح پرآگئی ہے، سونے کی فی اونس قیمت اب گیارہ سوبیالیس ڈالر ہوگئی ہے۔

شرح سود

مزید : صفحہ اول


loading...