پاک افغان کشیدگی بین الاقوامی سازش کا شاخسانہ ہے :جماعت اسلامی

پاک افغان کشیدگی بین الاقوامی سازش کا شاخسانہ ہے :جماعت اسلامی

خیبرایجنسی (بیورورپورٹ)پاک افغان خراب تعلقات بین الااقوامی سازش ہے ۔بارڈر بند ش سے پورا خطہ متاثر ہو گیا ہے ۔ سرحد ات کو بند کرنا مسئلے کا حل نہیں ہے ۔مہذب دنیا میں تمام مسائل مذاکرات کے ذریعے حل کئے جا تے ہیں ۔ٹرانسپورٹرز، کسان ،مزدور اور عام لوگوں کی زندگی پر منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں ۔عوام باالخصوص قبائل پریشانی کی عالم میں جی رہے ہیں ۔ان خیالات کا اظہار لنڈ ی کو تل جماعت اسلامی کے نائب امیر حاجی مقتدر شاہ افریدی اور جنرل سیکرٹری سید حکیم شینواری نے لنڈ ی کو تل پریس کلب میں پاک افغان بارڈر کی بندش کے سلسلے میں پریس کانفرنس کے دوران کیا انہوں نے کہا کہ پاک ا فغان بارڈر بندش سے حکومت اور عوام کا نقصان ہو رہا ہے بے روزگاری بڑھ رہی ہے ریڑھی اور ٹرانسپورٹ روکی ہو ئی ہے دہشت گردی خاتمہ کے لئے موثر حکمت عملی اپنانا چاہئے اور افغانستان کے ساتھ مزاکرات کی راہ اختیار کر نا چاہئے بارڈر بند کرنے سے رشتے اور تعلقات متاثر ہوئے ہیں پاکستان میں کارخانے بند ہورہے ہیں کاروبار ٹھپ ہو رہ گیا ہے بارڈر بندش سے کسان بھی بہت متاثر ہوئے ہیں جن کی زندگی اجیرن ہو گئی ہے تمام قبائل اور عوام کا مطا لبہ ہے کہ سرحد کو کھو ل دی جائے انہوں نے کہا کہ افغانستان میں ہندو ستان کا اثر کم کرنے کے لئے مو ثر پالیسی بنا ئی جائے طویل عرصہ تک ہم نے افغانیوں کی خدمت کی ہے تاہم ان کے دلوں کو جیتنے کے لئے سنجیدگی سے غور کر نا چاہئے انہوں نے کہا کہ سرحد بندش سے مسائل میں اضافہ ہوا ہے مقامی لوگ بے روزگارہو گئے دونوں طرف تلخی بڑھ گئی جس سے واضح ہو گیا کہ بارڈر بندش مسئلے کا حل نہیں دونوں ممالک کو چاہئے پاکستان اور افغانستان کے حوالے سے کی جانے والی سازش کو کامیاب نہ ہو دیا جائے تاہم پاک افغان کے خراب تعلقات پر خاموشی معنی خیز ہے کیونکہ اگر خراب تعلقات پر ہندوستان کے ساتھ بارڈر بند نہیں کیا جا سکتا تو افغانستان کے ساتھ بندش کا معاملہ کیوں پیش ایا افغانستان پاکستانی مصنوعات کے لئے مناسب منڈی ہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...