بھارت میں ہولی کھیلنے آنے والی برطانوی خاتون کے ساتھ جنسی درندگی، زیادتی کے بعد ایسا کام کہ دیکھ کر کوئی بھی لرز جائے گا

بھارت میں ہولی کھیلنے آنے والی برطانوی خاتون کے ساتھ جنسی درندگی، زیادتی کے ...
بھارت میں ہولی کھیلنے آنے والی برطانوی خاتون کے ساتھ جنسی درندگی، زیادتی کے بعد ایسا کام کہ دیکھ کر کوئی بھی لرز جائے گا

  


نئی دلی (نیوزڈیسک) ایک جانب بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی اور ان کے ساتھی ایک دوسرے پر ہولی کے رنگ پھینک رہے ہیں تو دوسری جانب بھارت آنے والی ایک اور غیر ملکی خاتون کو عصمت دری کے بعد خون میں نہلا دیا گیا۔

میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 28 سالہ ڈینیالہ میکلافلن ہولی کے موقع پر بھارت میں سیاحت کیلئے آئی تھی۔ وہ ریاست گووا کے مشہور تفریحی ساحلوں اگوندا اور پٹنم گئی اور اپنی زندگی کے آخری چند گھنٹے ہولی کی ایک تقریب میں گزارے۔ ڈینیالہ نے 22 فروری کو اپنے فیس بک اکاﺅنٹ پر ایک پوسٹ میںلکھا ” میں اپنے تمام گھر والوں اور خاندان والوں کی شکر گزار ہوں جنہوں نے میرے گھر کو اتنی پیاری جگہ بنایا اور ہمیشہ میرا خیال رکھا۔ میں بہت شکر گزار ہوں اور خود کو دنیا کی خوش قسمت ترین فرد محسوس کرتی ہوں ۔۔۔ایک اور مہم کیلئے روانہ ہو رہی ہوں۔ “

ٹرمپ کو ایک اور دھچکا ،عدالت نے ریاست ہوائی میں مسلم ممالک کے شہریوں پر سفری پابندی کا نیا حکم نامہ معطل کر دیا

وہ اگلے دن ہی بھارت پہنچ گئی اور پیر کی رات ہولی کی ایک تقریب میں شرکت کی۔ اگلی صبح دیو باگ ساحل پر اس کی لاش ایک مقامی کسان کو ملی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ڈینیالہ کو عصمت دری کے بعد قتل کیا گیا۔ اسے ایک رات قبل وکاس بھگت نامی ایک نوجوان کے ساتھ دیکھا گیا تھا ، جو سزا یافتہ مجرم ہے۔ دوسال قبل اسے غیر ملکی سیاحوں کے ساتھ ڈکیتی کے جرم میں گرفتار کیا گیا تھا۔

پولیس کے مطابق وکاس بھگت نے ڈینیالہ کی عصمت دری اور قتل کا عتراف کر لیا ہے۔ اس نے بتایا کہ خاتون کو قتل کرنے کے بعد شراب کی ٹوٹی ہوئی بوتل سے اس کے چہرے کا گوشت اُدھیڑڈالا تاکہ کوئی اسے شناخت نہ کیا جا سکے ۔ پولیس کا کہنا ہے کہ نوجوان لڑکی کا چہرہ اتنی بری طرح مسخ ہو چکا تھا کہ اس کی شناخت قطعاً ممکن نہ تھی ، البتہ پولیس کو اپنے ذرائع سے معلوم ہو چکا تھا کہ گزشتہ رات کسی غیر ملکی خاتون کو وکاس بھگت کے ساتھ دیکھا گیا تھا۔

ڈینیالہ کی والدہ نے بتایا کہ ان کی بیٹی سیرو سیاحت کو بہت پسند کر تی تھی اور اپنے اچھے مزاج کی وجہ سے ہر کوئی اسے پسند کرتا تھا ۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر انہیں ذرا سا گمان میں بھی ہوتا کہ ان کی بیٹی کو ایسی درندگی کا نشانہ بنایا جا سکتا ہے تو وہ کبھی اسے بھارت نہ جانے دیتیں۔

ضرور پڑھیں: ڈالر سستا ہو گیا

مزید : بین الاقوامی


loading...