’’کوروناوائرس کے خطرات سے پریشان عوام حکومتی بیانات نہیں عملی اقدامات کے منتظر، سرکاری ہسپتالوں کی ۔ ۔ ۔‘‘ حکومتی اتحادی جماعت کے رہنما مونس الٰہی بھی بول پڑے

’’کوروناوائرس کے خطرات سے پریشان عوام حکومتی بیانات نہیں عملی اقدامات کے ...
’’کوروناوائرس کے خطرات سے پریشان عوام حکومتی بیانات نہیں عملی اقدامات کے منتظر، سرکاری ہسپتالوں کی ۔ ۔ ۔‘‘ حکومتی اتحادی جماعت کے رہنما مونس الٰہی بھی بول پڑے

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان سمیت دنیا بھر کے کئی ممالک میں کرونا وائرس کے مصدقہ مریض سامنےآچکے ہیں اور پاکستان میں سب سے زیادہ مریض سندھ میں سامنے آئے ہیں تاہم اس دوران کچھ لوگ حکومتی اقدامات پر عدم اطمینان کا اظہار کررہے ہیں اور اب حکومتی اتحادی جماعت مسلم لیگ ق کے رہنما چوہدری مونس الٰہی بھی بول پڑے ۔

ٹوئٹر پر انہوں نے لکھا کہ ’’ کوروناوائرس کے خطرات سے پریشان عوام حکومتی بیانات نہیں عملی اقدامات کے منتظر، سرکاری ہسپتالوں کی فی الحال ناکافی تیاری،لوگ ہزاروں روپے ٹیسٹ فیس پرائیوٹ لیبز کو ادا کرنے پر مجبور ہیں، صحت کے ذمہ داران بیرون ِملک حفاظتی ماسک بھیجنےکے بجائے اندرونِ ملک اپنے ٹاسک پر توجہ دیں‘‘ اور ساتھ ہی انہوں نےکورونا وائرس کا ٹیگ بھی استعمال کیا۔

ان کا یہ موقف عوام کو بھی بھایا اور حق نواز نے لکھا کہ ’’ اعلیٰ سوچ، عوامی خدمت‘‘

تنویر مسعود نے لکھا کہ ’’اسے خلاف بولنا نہیں کہتے، یہاں جمہوریت ہے کوئی دربار نہیں لگا کہ کسی کو بولنے کی اجازت نہیں اور یہ رئیل ایشو ہے اسے سختی سے دیکھنا ھوگا، کیونکہ یہ جتنا پھیلے گا اتنی قوم کو قیمت دینا پڑے گی، یورپی ممالک نہیں کے اپنے ملکوں لاک ڈاون کر رہے ہیں‘‘۔

ایک اور صاحب کو بھی ان کا یہ موقف اچھا لگا جس کا اظہار کرتے ہوئے انہوں نے لکھا کہ ’’ آپ سے اتفاق کرتے ہیں، آپ سے محبت‘‘۔

ایک اور صاحب نے لکھا کہ مونس الٰہی جن کے پاس ٹیسٹ فیس دینے کے لیے پیسے ہیں، وہ تو کروا ہی لیں گے ، مسئلہ تو غریب عوام کی جان کے تحفظ کا ہے، آپ کو حکومت کو جنگی بنیادوں پر اقدمات کرنے کا جلد ازجلدمشورہ دینا چاہیے ۔ 

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور