قتل مقدمہ: موت کی سزا پانے والا  ملزم شک کی بنیاد پر بری کرنے کا حکم

قتل مقدمہ: موت کی سزا پانے والا  ملزم شک کی بنیاد پر بری کرنے کا حکم

  

 ملتان (خصو صی ر پو رٹر)  لاہور ہائیکورٹ ملتان بنچ کے ججز مسٹر جسٹس(بقیہ نمبر51صفحہ 7پر)

 صادق محمود خرم اور مسٹر جسٹس راجہ شاہد محمود عباسی پر مشتمل ڈویژن بینچ نے چوری کے تنازعہ پر دکان مالک کو قتل کرنے پر موت کی سزا پانے والے ملزم کو شک کی بنیاد پر بری کرنے کا حکم دیا ہے۔ قبل ازیں عدالت عالیہ میں ملزم  محمد گلزار نے کونسل پرنس ریحان افتخار شیخ کے ذریعے اپیل دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ اس کے خلاف پولیس تھانہ ممتاز آباد نے 18 فروری 2011 کو مقدمہ نمبر 197 درج کیا جس میں الزام عائد کیا کہ اس نے اپنے دکان مالک جہانگیر کو قتل کر دیا ہے مدعی محمد رضا نے مزید موقف اختیار کیا کہ ملزم نے اپنے مالک جہانگیر کو اس وجہ سے قتل کیا کیونکہ ملزم دکان سے 40 ہزار روپے کی چوری میں ملوث پایا گیا اور پنچایت نے بھی رقم واپس کرنے کا فیصلہ سنایا تھا رقم کو وصول کرنے کے لئے مقتول ملزم کے پاس گیا اور ملزم نے اسے تیز دھار آلہ مار کر قتل کر دیا اور اس کی نعش کو قریبی قبرستان میں پھینک دیا جسے اہل علاقہ نے بھی دیکھا تھا۔ سیشن کورٹ ملتان نے 29 جون 2012 کو سزائے موت اور دو لاکھ روپے معاوضہ ادا کرنے کی سزا سنائی تھی جبکہ یہ سزا غلط ہے اسے مقدمہ سے بری کیا جائے عدالت عالیہ نے وکلا دلائل کے بعد ملزم کی سزا کنفرمیشن کی درخواست مسترد کرتے ہوئے اسے شک کا فائدہ دے کر بری کرنے کا حکم دیا ہے۔

بری

مزید :

ملتان صفحہ آخر -