ایل پی جی دکانداروں کیخلاف آپریشن،متاثرین کا احتجاج

ایل پی جی دکانداروں کیخلاف آپریشن،متاثرین کا احتجاج

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

ملتان(خصو صی   پورٹر، نیوز رپورٹر)  شہر بھر میں ایل پی جی کی فروختگی کے معاملہ پر انتظامیہ کے سخت ایکشن کے بعد ایل پی جی فروخت کرنے والے دکاندار ڈپٹی کمشنر افس پہنچ گئے۔ ایل پی جی فروختگی کرنے والے دکانداروں نے دکانوں کو بار بار سیل کرنے جرمانہ عائد کرنے اور مقدمات درج کرنے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔  اس دوران ایل پی جی گیس ڈیلرز  ایسوسی ایشن  کے صدر قاضی ناصر اور جنرل سیکرٹری خالد بھٹہ سمیت دیگر نمائندوں نے مطالبہ کیا ھے کہ ماہ رمضان میں قانونی طور پر کاروبار کرنے والوں کو پولیس بے جا طور پر تنگ نہ کرئے۔ (بقیہ نمبر3صفحہ7پر)

 تفصیل کے مطابق ایل پی جی ڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن کے عہدے داروں نے گزشتہ روز ضلع کچہری میں ڈپٹی کمشنر افس کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا۔ اس دوران مظاہرین نے  غیر قانونی طور پر دکانوں کو سیل کرنے اور پرچے درج کرنے کے معاملے پر شدید احتجاج کیا۔ مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے ایل پی جی ڈیلرز ایسوسی ایشن کے صدر ناصر قاضی نے کہا کہ انتظامیہ بار بار ایل پی جی گیس سلنڈر کی فروختگی کرنے والے دکانداروں کی دکانوں کو سیل کر رہی ہے اور بھاری جرمانے بھی عائد کیے جا رہے ہیں۔ اس مہنگائی کے دور میں عوام سے ایک طرف تو جلانے کے لیے فراہم کیے جانے والے ایندھن کو ختم کیا جا رہا ہے تو دوسری جانب غریب دکانداروں سے ان کے بچوں کا رزق بھی چھینا جا رہا ہے۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ دکاندار کی سطح کی بجائے انتظامیہ ایل پی جی پلانٹس اور بڑے سپلائی ڈیلرز کی سطع پر ایل پی جی گیس کے نرخ کو مستقل مانیٹر کرنے کا کوئی فارمولا بنائے۔ایل پی جی ڈیلرز ایسوسی ایشن کے جنرل سیکرٹری خالد بھٹہ نے کہا کہ قدرتی گیس اب تقریبا ختم ہو چکی ہے اج ہر شہری ایل پی جی گیس کا استعمال کر رہا ہے۔ بڑے ڈیلرز ریٹ زیادہ لگا کر دکانداروں کو مہنگی گیس فروخت کرتے ہیں۔ سول ڈیفنس پولیس اور انتظامیہ چھوٹے دکانداروں کو ہی بار بار جرمانے عائد کر کے ان کی دکانوں کو سیل کر دیتی ہے۔  لوگوں کے پاس گھروں میں اب قدرتی گیس تو اب میسر نہیں ھے تو ایل پی جی ہی واحد سہارا ہے جس سے وہ اپنا چولہا جلا سکتے ہیں۔ دوسری جانب غریب دکاندار بھی یہی گیس فروخت کر کے اپنے بچوں کا رزق کماتے ہیں۔ ماہ رمضان میں ایسی دکانوں کے بند ہو جانے سے عام ادمی تکلیف کا شکار ہو رہا ھے۔