بوکو حرام کے خلاف امریکی مہم الٹی پر گئی

بوکو حرام کے خلاف امریکی مہم الٹی پر گئی
بوکو حرام کے خلاف امریکی مہم الٹی پر گئی

  

اسلام آباد (نیوزڈیسک) مغوی نائجیرین طالبات کی رہائی کے لئے مشعل اوباما کی جانب سے شروع کی جانے والی مہم الٹی پڑ گئی ہے. سوشل میڈیا پر ان  کی طرف سے دیئے جانے والے تصویری پیغام کو ڈرون حملوں کی بندش کے ساتھ منسلک کر دیا گیا۔ گزشتہ ہفتے عالمی میڈیا پر مشعل اوباما کی ایک تصویر شائع کی گئی، جس میں انہوں نے ایک کارڈ پکڑ رکھا تھا، جس پر اس # سائن کے ساتھ ”ہماری لڑکیوں کو واپس کرو“ تحریر تھا۔ اس تصویر کی اشاعت کے بعد انٹرنیٹ صارفین کی طرف سے وسیع پیمانے پر بحث شروع ہو گئی کہ اگرچہ مشعل کا نائجیرین طالبات کی آزادی کے لئے آواز اٹھانا بہت اچھا ہے لیکن امریکی جارحیت کو روکنے کے لئے آواز کیوں نہیں بلند کی جا رہی۔ تصویر میں جہاں مشعل اوباما نے ”ہماری لڑکیاں واپس کرو“ کا کارڈ پکڑ رکھا تھا، اس میں مصنوعی تبدیلیاں کرکے مشعل کے ہاتھ میں ڈرون حملوں کی بندش کا کارڈ تھما دیا گیا۔ روسی ریڈیو کے مطابق ان ڈرون حملوں کے بارے میں امریکہ کا موقف ہے کہ ڈرون حملے شدت پسندوں کا خاتمے میں نہایت موثر ہتھیار ہے۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ ان حملوں میں عام شہری مارے جا رہے ہیں، جس کا واضح ثبوت پاکستان اور یمن دیکھا جا سکتا ہے، جہاں ان حملوں کی وجہ سے امریکہ کے لئے نفرت بڑھ رہی ہے۔

مزید : بین الاقوامی