چارسدہ ،بجلی چوروں نے ایس ایچ او اور واپڈا ملازمین کی درگت بنادی

چارسدہ ،بجلی چوروں نے ایس ایچ او اور واپڈا ملازمین کی درگت بنادی

چارسدہ (بیورو رپورٹ)بجلی چوروں نے ایس ایچ او اور واپڈا ملازمین کی درگت بنا دی ۔ ایس ایچ او کی وردی بھی پھاڑ دی گئی ۔ واقعہ کے خلاف چارسدہ میں واپڈا ملازمین سڑکوں پر نکل آئے ۔تحریک انصاف کے مرکزی نائب صدر فضل محمد خان کے حکم پر ایس ایچ او معطل۔اہل علاقہ کا بھی واقعہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ ۔فضل محمد خان نے تمام الزامات مسترد کر دئیے ۔۔ تفصیلات کے مطابق بجلی چوروں کے خلاف جاری اپریشن کے دوران گزشتہ روز تھانہ خانمائی کے حدور دڑہ کلی میں مبینہ بجلی چوروں نے واپڈا اہلکاروں اور پولیس پر دھاوا بول کر ایس ایچ او عرفان اللہ کی وردی پھاڑ دی اور واپڈا سمیت پولیس اہلکاروں کو تشدد کا نشانہ بنایا ۔واقعہ کے خلاف واپڈا ہائیڈرو یونین کی کال پر واپڈا ملازمین نے دفاتر کی تالا بندی کی اور سڑکوں پر نکل تحریک انصاف حکومت اور فضل محمد خا ن کے خلاف شدید نعرہ بازی کی ۔ احتجاجی مظاہر ے سے خطاب کر تے ہوئے واپڈا ہائیڈرو یونین کے چےئرمین اکرام اللہ اور دیگر نے کہا کہ حکومت نے واپڈا واجبات کی وصولی اور بجلی چوری روکنے کیلئے محکمہ پولیس کی خدمات حاصل کی اور چارسدہ میں باقاعدہ طور پر واپڈا پولیس سٹیشن قائم کرکے 55پولیس جوانوں کو تعینات کیا گیا ہے جن کو تنخواہ اور دیگر مراغات واپڈا کی طرف سے فراہم کی جا تی ہے مگر بعض خان خوانین اور سیاسی لوگ خود بھی بجلی چور ہیں اور بجلی چوروں اور نادہندہ گان کی پشت پناہی کرکے واپڈا کو نقصان پہنچا رہے ہیں۔ مقررین نے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ بجلی چوروں کے خلاف اپریشن کے دوران دڑہ کلی میں واپڈا ملازمین اور ایس ایچ او عرفان اللہ کو تشدد کا نشانہ بنایا گیاجبکہ ایس ایچ او کی وردی بھی پھاڑ دی گئی مگر تحریک انصاف کے مرکزی نائب صدر فضل محمد خان کے حکم پر ڈی پی او چارسدہ نے ایس ایچ او کو معطل کرکے لائن حاضر کر دیا جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔ انہوں نے واشگاف الفاظ میں کہا کہ ایس ایچ او کی بحالی اور ملزمان کے خلاف بھر پور قانونی کاروائی تک احتجاج جاری رہیگا۔ دوسری اہل علاقہ دڑہ کے عوام نے واپڈا اہلکاروں اور پولیس کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا اور محکمہ واپڈا اور پولیس کے خلاف شدید نعرہ بازی کی ۔ اس موقع پر خطاب کر تے ہوئے تحریک انصاف کے مرکزی رہنماء فضل محمد خان نے واپڈا ملازمین کے تمام الزامات مسترد کر دیئے اور کہا کہ تحریک انصاف اداروں میں مداخلت پر یقین نہیں رکھتی ۔ ایس ایچ او اور واپڈا ملازمین نے شریف لوگوں کے کپڑے پھاڑ کر حوالات میں بند کرکے ان پر تشدد کیاہے ۔ اس حوالے سے ایس ایچ او سے رابطہ کیا تو انہوں نے مجھے بھی دھمکیاں دی جس پر میں نے ڈی پی او چارسدہ سے شکایت کی جس پر انہوں نے محکمانہ کاروائی کی ۔فضل محمد خان نے مزید کہا کہ اس حوالے سے وہ آئی جی خیبر پختونخوا کو بھی تحریری طور پر آگاہ کرینگے اور ایس ایچ او کے خلاف مزید قانونی چاروہ جوئی کرینگے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر