وہ نوکریاں جنہیں کرنے والے مردوں کی جلدی موت ہوجاتی ہے، کون سی نوکریاں ہیں؟ سائنسدانوں کا جواب جان کر پاکستانی بے حد پریشان ہوجائیں گے کیونکہ۔۔۔

وہ نوکریاں جنہیں کرنے والے مردوں کی جلدی موت ہوجاتی ہے، کون سی نوکریاں ہیں؟ ...
وہ نوکریاں جنہیں کرنے والے مردوں کی جلدی موت ہوجاتی ہے، کون سی نوکریاں ہیں؟ سائنسدانوں کا جواب جان کر پاکستانی بے حد پریشان ہوجائیں گے کیونکہ۔۔۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ایمسٹرڈیم(مانیٹرنگ ڈیسک) عام تاثر پایا جاتا ہے کہ جسمانی مشقت کرنے والے لوگ دفاتر میں کام کرنے والوں کی نسبت زیادہ صحت مند رہتے ہیں اور طویل عمر پاتے ہیں لیکن اب سائنسدانوں نے نئی تحقیق میں اس کے برعکس ایسا انکشاف کر دیا ہے کہ دفاتر میں بیٹھنے والے لوگ خوش ہو جائیں گے اور جسمانی مشقت کرنے والے پریشان۔ میل آن لائن کے مطابق ’وی یو‘یونیورسٹی کے تحقیق کاروں نے 2لاکھ افراد کے کام کی نوعیت اور ان کی صحت کا ڈیٹا حاصل کرکے اس کا تجزیہ کیا جس میں معلوم ہوا کہ ایسے لوگ جو جسمانی مشقت، مزدوری وغیرہ کرتے ہیں ان کے کم عمری میں موت کے منہ میں جانے کے امکانات 18فیصد زیادہ ہو جاتے ہیں۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

تحقیقاتی ٹیم کے سربراہپیٹر کوئنن کا کہنا تھا کہ ”ہم نے اس تحقیق میں جسمانی مشقت کرنے اور دفاتر میں کام کرنے والے ایسے افراد کا موازنہ کیا جن کا طرزِ زندگی ایک جیسا تھا، یعنی ان کی سگریٹ نوشی، ورزش، غذا اور دیگر ایسی عادتیں ایک جیسی تھیں، صرف کام میں فرق تھا۔تحقیق کے نتائج میں معلوم ہوا کہ جو لوگ جسمانی مشقت کرنے والے تھے ان کو صحت کے زیادہ مسائل لاحق تھے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ جسمانی مشقت پر مبنی کوئی عمل بار بار دہرانے سے دل کی صحت پر بہت منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔جب آپ دن میں ایک آدھ گھنٹے کے لیے جاگنگ کرتے ہیں تو آپ کے دل کی دھڑکن تیز ہوتی ہے جس کے بعد آپ خود کو بہتر محسوس کرتے ہیں لیکن جب بات تمام دن جسمانی طور پر متحرک رہنے کی آئے تو یہ بالکل الگ چیز ہے۔ اس سے دل اور اس سے منسلک اعضاءپر دباﺅ پڑتا ہے، جو کہ آدمی کے لیے نقصان دہ ثابت ہوتا ہے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /بین الاقوامی