ڈاکٹر فردوس، اور سیاست!

ڈاکٹر فردوس، اور سیاست!

  

سچ ہی کہتے ہیں کہ سیاست کے سینے میں دِل نہیں ہوتا،بلکہ اگر یہ کہا جائے کہ یہاں تو سینہ ہی نہیں ہوتا تو دِل کا کیا سوال،وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد حسین چودھری اپنی موجودگی کا احساس دِلاتے رہتے ہیں۔ اپنے تازہ ترین ارشاد میں انہوں نے کہا کہ سابق معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے اطلاعات کے اس شعبہ کی سربراہی کے لئے لابنگ کی، وہ اس کی اہل نہیں تھیں، ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان سے قبل یہ محکمہ فواد چودھری ہی کے پاس تھا اور انہی سے لے کر خاتون کو دیا گیا تھا۔ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے ان کا تو کوئی جواب نہیں دیا،البتہ ان اینکرپرسن کو قانونی نوٹس ضرور دیا ہے، جنہوں نے اپنے پروگرام میں کہا کہ وہ (ڈاکٹر فردوس) پیپلزپارٹی میں واپس جانے کی کوشش کر رہی ہیں۔یوں تردید کا یہ زیادہ زور دار طریقہ ہے کہ توہین کا قانونی نوٹس خبر بنا، ویسے سابق معاون خصوصی اطلاعات و نشریات تنہائی میں سوچتی تو ضرور ہوں گی کہ ان کے ساتھ کیا ہوا، وہ تو دن رات مستعد تھیں اور حکومت سے زیادہ اپنے وزیراعظم کا دفاع اور تعریف کرتی رہتی تھیں،جب وہ اس عہدے پر فائز تھیں تو دن میں چار پانچ مرتبہ تو ٹی وی پر لائیو دکھائی دیتی تھیں،اب وہ دن ہَوا ہوئے کہ پسینہ گلاب تھا۔ بہرحال یہ تحریک انصاف کا اندرونی معاملہ ہے وہ جانیں، ہم تو یہ گذارش کریں گے کہ اچھے وقت کو اچھا گذارا جائے تو یاد بھی رکھے جاتے ہیں۔

مزید :

رائے -اداریہ -