یوم شہادت حضرت علی ؓ، پنجاب، سندھ میں تعزیہ جلوس برآمد

یوم شہادت حضرت علی ؓ، پنجاب، سندھ میں تعزیہ جلوس برآمد

  

لاہور،کراچی،کوئٹہ،پشاور(مانیٹرنگ ڈیسک،ایجنسیاں) امیر المومنین و داماد رسول ؐ کا یوم شہادت گزشتہ روز مذہبی عقیدت و احترام کیساتھ منایا گیا۔جمعہ،ہفتہ اور اتوار مکمل لاک ڈاؤن کے باعث صوبائی حکومتوں کی جانب سے ایس او پیز پر عملدرآمد کی صورت میں صرف مرکزی تعزیہ کے جلوس نکالنے کی خصوصی اجازت دی گئی تھی جبکہ چھوٹے جلوسوں کو روک دیا گیا،دفعہ 144 کی خلاف ورزی پرشہر کے مختلف تھانوں میں 29 مقدمات درج کئے گئے اور 200 افراد کو گرفتار کرلیا گیا۔ مجلس وحدت مسلمین نے سندھ میں پکڑ دھکڑ کی شدید الفاط میں مذمت کی اور گرفتار افراد کو رہا کرنے کا مطالبہ کیا۔تفصیلات کے مطابق پنجاب سمیت ملک بھر میں کورونا وباء کے پیش نظرہر قسم کے جلوسوں مذہبی اجتماعات پر پابندی عائد ہے تاہم لاہور میں خصوصی اجازت پر پولیس اور سیکیورٹی کے سخت حصار میں یوم شہادت حضرت علی ؓ کے موقع پر مرکزی شبیہہ تعزیہ کا جلوس صبح 7 بجے مبارک حویلی سے برآمد ہوا اور مرکزی راستوں سے ہوتا ہوا 8 گھنٹے کے بعد کربلا گامے شاہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوگیا۔ جلوس کے راستوں پر سیکیورٹی کے سادہ لباس میں ملبوس اہلکار بھی موجود رہے۔علاوہ ازیں بلوچستان میں یومِ شہادت حضرت علیؓ کے موقع پر کوئی تعزیہ برآمد نہ ہوا، خیبرپختونخوا میں پابندی کے باوجود جلوس نکالنے کی کوشش کی گئی جسے انتظامیہ نے ناکام بنا دیا۔کراچی میں یومِ شہادت حضرت علی ؓ کی مناسبت سے تعزیہ کا مرکزی جلوس 11 بجے حسینیہ ایرانیہ امام بارگاہ کھارادر میں اختتام پذیر ہوا، جلوس کی گزرگاہوں کو کنٹینر لگاکر بند کردیا گیا تھا جبکہ سیکیورٹی کے بھی سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ شرکاء کی جانب سے مرکزی جلوس میں حکومتی ایس او پیز کا خیال رکھا گیا تھا۔پابندی کے پیش نظر ملک بھر کے دیگر علاقوں سے برآمد ہونے والے چھوٹے جلوسوں کو اجازت نہیں دی گئی۔کراچی میں دفعہ 144 کی خلاف ورزی پر 38 مقدمات درج کئے گئے۔200 کے قریب افراد کو گرفتار کر کے ان کیخلاف مقدمات درج کر لئے گئے۔ جن افراد کو گرفتار کیا گیا ان میں جلوس کے منتظمین اور شرکاشامل ہیں۔ مجلس وحدت المسلمین کے رہنما علامہ باقر عباس زیدی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ یہ گرفتاریاں تعزیہ جلوس سے واپسی پر کی گئیں جو کہ قابل مذمت ہے، کراچی سمیت سندھ بھر میں ایس او پیز کی پابندی کے باوجود گرفتاریاں کی گئیں، حکومت سندھ گرفتار افراد کو فوری رہا کرے۔

تعزیہ جلوس

مزید :

صفحہ آخر -