پاک افغان ٹریڈ کھولی جائے: وفاقی چیمبر

      پاک افغان ٹریڈ کھولی جائے: وفاقی چیمبر

  

پشاور(اے پی پی)فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری نے پاک افغان باہمی تجارت، ٹرانزٹ وٹریڈ مسائل اور فری ٹریڈ ایگریمنٹ پاک افغان دونوں برادر ممالک کے درمیان کرانے کو وقت کی ضرورت قرار دیتے ہوئے دونوں ممالک سے بارڈ سٹیشن 24گھنٹے کھولنے کا مطالبہ کیاہیں۔پاک افغان ٹریڈ کے حوالہ سے ایف پی سی سی آئی ریجنل آفس پشاور کا اہم مشترکہ اجلاس ممتاز صنعتکار فضل الہی کے رہائش گاہ المصطفیٰ میں منعقد ہوا جس میں مہمان خصوصی افغان قونصل جنرل نجیب اللہ احمد زئی،خیبرپختونخواوزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے انڈسٹری وتجارت عبدالکریم خان، خیبرپختونخوا بورڈ آف انوسمنٹ اینڈ ٹریڈ چیف ایگزیکٹیو حسن داؤد بٹ،سابق صدر ایف پی سی سی آئی وبزنس مین پینل پاکستان کے سیکرٹری جنرل حاجی غلام علی،ایف پی سی سی آئی نائب صدر قیصرخان داؤدزئی، ایف پی سی سی آئی کوارڈینیٹر سرتاج احمد خان، افغان کمرشل اتاشی محمد فواد ارش،سابقہ نائب صدور محمد عدنان جلیل، فضل الہی، مہمند چیمبرصدرغلام بنی، ایف پی سی سی آئی پاک افغان ٹرانزٹ کنونیئرضیاء الحق سرحدی، سرحد چیمبرآف کامرس سینئر نائب صدر شاہد حسین سمیت بزنس کمیونٹی سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی۔ اجلاس میں مہمان خصوصی افغان قونصل جنرل نجیب اللہ احمد زئی اور وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی برائے انڈسٹری عبدالکریم خان نے دونوں ممالک باہمی تجارت بڑھانے، بارڈسٹیشن کی اپ گریڈیشن، سہولیات، تجارتی مواقعوں پیدا کرنے، فری ٹریڈ ایگریمنٹ،باہمی دو طرفہ تجارت بڑھانے کیلئے ریجنل کوارڈینیشن کمیٹی قائم کرنے،ٹرانسپورٹ مسائل کے حل، ایف پی سی سی آئی آفس میں پاک افغان ہیلپ ڈسک قائم کرنے کے لئے جائنٹ ونچر پر زور دیا ہے۔ مہمان خصوصی ا فغان قونصل جنرل نجیب اللہ احمد زئی نے کہاکہ پاک افغان باہمی تجارت وقت کی ضرورت ہے اور دونوں برادر ممالک کو ٹرانزٹ اور ٹریڈ کیلئے میکنزم وضع کرنا چاہئے اورنئے بزنس پلان سے پاک افغان باہمی تجارت کو فروغ مل جائے گی۔ انہوں نے دونوں ممالک کے درمیان فری ٹریڈ ایگریمنٹ اور بارڈ سٹیشن کو24کھولنے کو وقت کی ضرورت قرار دے دیا۔ معاون خصوصی عبدالکریم خان نے پاک افغان باہمی تجارت بڑھانے کیلئے ایف پی سی سی آئی کاوشوں کو سراہتے ہوئے کہاکہ اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ موجودہ وقت صنعت وتجارت کا ہے اور ملکوں کے درمیان آسانی سے امپورٹ وایکسپورٹ سے نہ صرف ترقی ہوتی ہے بلکہ بے روزگاری کا خاتمہ بھی ممکن ہوجاتاہے اوردونوں ممالک کو قیمتی زرمبادلہ مل سکے گا۔ انہوں نے کہاکہ بزنس کمیونٹی کے ایڈوائس پر بتدریج پاک افغان ٹریڈ کے مسائل کے حل کیلئے جدوجہد گامزن ہے۔ انہوں نے کہاکہ صوبائی حکومت صوبے میں سرمایہ کاری کے فروغ کیلئے نئی انڈسٹری پالیسی آئندہ کابینہ اجلاس میں منظور کرے گی جس میں چھوٹے اور درمیانے درجے کے صنعتوں کے فروغ اور مرکزی دائرے میں لائینگے۔ انہوں نے کہاکہ پشاور ڈرائی پورٹ کو فعال کرنے کیلئے اقدامات جاری ہیں اور کوشش ہے کہ ا فغان ٹرانزٹ اور باہمی دوطرفہ تجارت ادھر سے شروع کریں جبکہ تجارتی سرگرمیاں بڑھانے کیلئے ایکسپو سنٹر ترناب کاکام بھی آخری مراحل میں ہے۔ حاجی غلام علی نے کہاکہ ملک میں بھی دوشہریوں کے درمیان ٹریڈ مسائل ہوتی ہے تو پھر دوممالک کے درمیان باہمی دوطرفہ تجارت پر مشکلات اور مسائل ہوں گے لیکن حکومت کو چاہئے پاک افغان باہمی تجارت بڑھانے اور چائینہ طرز پر فری ٹریڈ پاک افغان معاہدہ سمیت بارڈ 24گھنٹے کھولنے کیلئے اقدامات اٹھائے۔ ا س موقع ایڈیشنل کسٹم کلکٹر عدنان سواتی نے کہاکہ طورخم بارڈ پر وی باکس کی سہولت دینے کے بعد غلام خان شمالی وزیرستان اور کلاچی بارڈ سٹیشن پر وی باکس سسٹم نصب کررہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ عنقریب وفاقی حکومت طورخم بارڈ سمیت دیگر بارڈ سٹیشن پر تمام وزراتوں کے افسران تعینات کرے گی اور 8سے10 نوٹیفائیڈپاک افغان بارڈسٹیشن کھول کر الیکڑانک ای فارم کی سہولت میسر ہونگے۔ افغان کمرشل اتاشی محمد فواد ارش نے کہاکہ ٹرانزت اور باہمی تجارت بڑھانے کیلئے روزمرہ کی بنیاد پر15کنٹینر کی اجازت کی وجہ سے کراچی سے خیبر اور طورخم سے کابل تک ہزاروں کی تعداد کنٹینر رکھے ہوئے ہے جس کی وجہ سے ایکسپورٹر امپورٹرز کو ٹرانسپورٹ کے اضافی چارج برداشت کرنا پڑتاہے اور اسی وجہ سے ٹریڈ طورخم وچمن بارڈ سے تجارت دیگر ممالک کے بارڈ پر منتقل ہورہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ کورونا وباء کے باوجود ا یران نے بارڈ بند نہیں کی ہے۔ اجلاس کے آخر میں ایف پی سی سی آئی نائب صدر قیصرخان داؤدزئی کے بزنس کمیونٹی کے مسائل کے حل کیلئے افغان قونصل جنرل نجیب اللہ احمدزئی اور معاون خصوصی برائے انڈسٹری عبدالکریم خان کے کوششوں کوسراہا اور ایف پی سی سی آئی کے پیلٹ فارم سے پاک افغان باہمی تجارت کے مسائل کے ہرممکن حل نکالنے کی یقین دہانی کرائی جبکہ اس سے قبل سٹیج سیکرٹری وکوآرڈینیٹر سرتاج احمد نے باہمی تجارت بڑھانے کیلئے ایف پی سی سی آئی ریجنل آفس میں پاک افغان ہیلپ ڈسک قائم کرنے اور فری ٹریڈ ایگریمنٹ کرانے کی تجویز پیش کرتے ہوئے ایف پی سی سی آئی ریجنل آفس پشاور کی طرف مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔ اجلاس کے شرکاء کے اعزاز میں احمد مصطفی نے پروقار افطار ڈنر کاہتمام بھی کیا جبکہ معزز مہمانوں کو حاجی غلام علی، قیصرخان اور سرتاج احمد نے روایتی ٹوپیاں اور چادر پہنا کرخاطرتواضع کی۔

مزید :

کامرس -