پنجاب سندھ کے حصے کا پانی چوری کرنا بند کردے،سندھ حکومت

پنجاب سندھ کے حصے کا پانی چوری کرنا بند کردے،سندھ حکومت

  

سکھر(آن لائن)سندھ حکومت نے پنجاب کو دھکمی دی ہے کہ اگر اس نے سندھ کے حصے کا پانی چوری کرنے کا سلسلہ بند نہ کیا تو سندھ حکومت آبادگاروں کے ساتھ مل کر بلاول بھٹو کی قیادت میں سندھ پنجاب سرحد پر دھرنا دے کر اسے بند کردے گی اور پنجاب اور وفاق کے اس عمل کے خلاف سندھ اسمبلی کے آئندہ اجلاس میں قرار داد بھی لائے گی ان خیالات کا اظہار سکھر بیراج کے دورے کے بعد سندھ کے وزیر آبپاشی سہیل انور سیال اور وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے مشترکہ پریس کا نفرنس کرتے ہوئے کیا مذکورہ رہنماؤں کا کہنا تھا کہ پنجاب چشمہ لنک کینال اور ٹی پی لنک کینال کھول کر سندھ کے حصے کا پانی چوری کرررہاہے اور اس نے ان دونوں کینالز پر پانچ پانچ میگاواٹ کے بجلی بنانے کے منصوبے بھی شروع کررکھے ہیں جس کی وجہ سے سندھ کو اس کے حصے کا ہانی نہیں مل رہا ہے اس وقت سندھ میں مجموعی طور پر پچاس فیصد پانی کی قلت ہے سکھر بیراج پر اس وقت 20 فیصد اور کوٹری بیراج پر 44 فیصد پانی کی کمی ہے جس کی وجہ سے کوٹری بیراج سے آگے کے علاقوں خصوصا حیدرآباد اور کراچی میں لوگ پینے کے پانی کو ترس رہے ہیں سندھ کے وزیر اعلیٰ سید مراد علی شاہ نے اس مسئلے کو مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں بھی اٹھا یاہے لیکن نااہل حکومت اس کا نوٹس تک نہیں لے رہی ہے وزراء کا کہنا تھا کہ ہم نہیں چاہتے کہ کسی کی حق تلفی ہواور اس پانی کی بحرانی صورتحال میں بھی ہم۔بلوچستان کو گڈو بیراج سے اس کے حصے کا پانی دے رہے ہیں اور ہم۔چاہتے ہیں کہ سندھ کا پانی بھی چوری نہ ہو ان کا کہنا تھا کہ سندھ کے ساتھ زیادتی ہورہی ہے اور یہاں تک کہ پنجند اور تونسہ پر موجود سندھ حکومت کے نمائندے تک کو وہاں سے نکال دیا گیا ہے ہم اس پر خاموش نہیں بیٹھیں گے ریاست مدینہ کے دعوے دار ریاست یزید کا کردار ادا کررہے ہیں ان کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی صرف سندھ کے حقوق کی بات نہیں کرتی وہ پنجاب،بلوچستان اور کے پی کے کے مسائل پر بھی بلاول بھٹو سخت موقف رکھتے ہیں ہم پورے پاکستان کی بات کرتے ہیں مگر یہاں تو نااہل حکومت کی نااہلی سندھ کو بنجر بنا رہی ہے۔ 

سندھ حکومت

مزید :

صفحہ آخر -