عید خوشیاں آہوں سسکیوں میں تبدیل: شہر شہر حادثے، 18افراد ہلاک، کئی شدیدزخمی 

عید خوشیاں آہوں سسکیوں میں تبدیل: شہر شہر حادثے، 18افراد ہلاک، کئی شدیدزخمی 

  

  

 ملتان،کہروڑپکا، کچاکھوہ، مظفرگڑھ،وہاڑی، رحیم یار خان(خصوصی رپورٹر،تحصیل رپورٹر، نمائند پاکستان، نامہ نگار، بیورورپورٹ، نمائندہ خصوصی) ملتان سمیت جنوبی پنجاب کے مختلف شہروں میں حادثات کے دوران 18افراد جاں بحق ہوگئے۔ تفصیل کے مطابق تھانہ صدر جلالپورکے علاقے 35سالہ شخص نے گلے میں پھندہ ڈال کر کودکشی کرلی،پولیس نیموقع پر پہنچ کر کارروائی شروع کردی ہے۔تفصیل کیمطابق موضع منشی والہ کارہائشی ذوالفقار کی پندرہ سال قبل پروین کیساتھ شادی ہوئی گزشتہ پانچ ماہ سے اپنیشوہر ذوالفقار سیگھریلوں ناچاقی پر اپنے اہلخانہ کیگھر رہائش پزیر تھی جس نے تنسیخ کا دعوہ کرکے ذوالفقار سے طلاق حاصل کرلی تھی،طلاق کیرنج میں ذوالفقار نے اپنی زندگی کاخاتمہ کرنیکیلئے خودکو کمرے(بقیہ نمبر20صفحہ6پر)

 میں بند کرکے گلے میں تار ڈال کر پنکھے سے جھول گیا اور موت واقع ہوگئی، ذوالفقار کیاہلخانہ نیکمرے کادروازہ توڑ کر دیکھا کہ ذوالفقار مردہ حالت میں پایاگیا جس کی اطلاع متعلقہ پولیس کو دی گئی،اطلاع پاکر پولیس نیجائے وقوعہ پر پہنچ کر ذوالفقار کی نعش قبضے میں لیکر ضروری کاغذی کارروائی مکمل کرنیکے بعد اہل خانہ کیحوالے کردی اور واقعہ کیمتعلق تفتیش شروع کردی ہے۔ادھر خودکشی اور اقدام خودکشی کے مختلف چارواقعات میں لڑکی سمیت چارافراد کو تشویشناک حالت میں نشتر ہسپتال منتقل کیاگیا،دودم توڑ گئے۔تفصیل کیمطابق تھانہ بستی ملوک کیعلاقے چک12فیض کا رہائشی محمد کامران نے گھریلوں ناچاقی پر زندگی کاخاتمہ کرنیکیلئے گندم والی گولیاں کھالی جسے تشویشناک حالت میں نشتر ہسپتال داخل کروایاگیاجودوران علاج نشتر ہسپتال میں چل بسا،بستی احسان پورکوٹ ادوکی رہائشی 22سالہ رخسانہ نے گھروں والوں کی دانت ڈپٹ پر کالاپتھر پی لیا جسے حالت غیرہونیپر نشتر ہسپتال لایاگیا جو دوران علاج نشتر ہسپتال میں زندگی کی بازی ہارگئی،تھانہ قطب پورکیعلاقے چونگی نمبر22کارہائشی حفیظ خان نے شراب کینشے میں دھت ہوکر خودکو گولی مارکر زخمی ہوگیا جبکہ چک13فیض بستی ملوک کیرہائشی 18سالہ محمد اقبال نے گھریلوں حالات سے دلبرداشتہ ہوکر سپرے پی لیا جسے تشویشناک حالت میں نشتر ہسپتال منتقل کیاگیاجن کا علاج معالجہ جاری ہے،واقعات کی اطلاعات پر متعلقہ پولیس نے خودکشی اور اقدام خودکشی کیمتعلق تفتیش کاآغاز کردیا ہے۔جبکہ  تھانہ شاہ رکن عالم کے علاقے37سالہ واپڈا ملازم نے ٹرین کے نیچے آکرخودکشی کرلی،پولیس نے نعش قبضے میں لیکر پوسٹ کے بعد ورثا کے حوالے کر دی تفصیل کیمطابق انڈرپاس شاہ رکن عالم نزد لاری اڈا کیقریب واپڈا کا لائن مین اکمل جاوید نے نامعلوم وجوہات کی بناپر زندگی کاخاتمہ کرنیکیلئے کراچی جانیوالی ٹرین ہزارہ ایکسپریس کے نیچے آکر خودکشی کرلی،واقع کی اطلاع پر متعلقہ پولیس نے جائے وقوعہ پر پہنچ کر واپڈا لائن مین کی نعش قبضے میں لیکر ضروری کاغذی کارروائی مکمل کرنے کے بعد اہل خانہ کے حوالے کردی اور واقعہ کے متعلق تفتیش کاآغاز کردیا ہے۔ادھر ٹریفک حادثہ میں زخمی ہونیوالا65سالہ شخص دوران علاج نشتر ہسپتال میں چل بسا۔تفصیل کے مطابق شیر شاہ کیقریب نامعلوم شخص کو تیزرفتار کار کی ٹکر سے شدید زخمی حالت میں نشتر ہسپتال داخل کروایاگیا جوزخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دوران علاج نشتر میں دم توڑ گیا،چوکی پولیس نے نامعلوم شخص کی نعش تحویل میں لیکر نشتر ہسپتال کیسرد خانیکرنیکیبعد مظفرآبادپولیس کو اطلاع دی،مقامی پولیس نے نامعلوم شخص کیاہلخانہ کی تلاش شروع کرتے ہوئے فرار ہونیوالے کارڈرائیورخلاف کارروائی شروع کردی ہے۔  جبکہ نواحی علاقہ رانا واہن چوک میں تیز رفتاری کے باعث 3 موٹر سائیکلوں میں تصادم ہوا جس کے نتیجہ میں 2 افراد غضنفر عرف کاکا سکنہ چیلے واہن اور نامعلوم موقعہ پر سر میں چوٹ لگنے سے ہلاک ہو گئے جبکہ 4 افراد عرفان وغیرہ شدید زخمی ہو گئے زخمیوں کو کہروڑپکا ہسپتال پہنچا دیا گیا۔ ادھر  ٹک ٹاک بناتے ہوئے ٹرین کی ٹکرسے ایک جبکہ موٹر سائیکل ٹکرانے سے دوافراد جاں بحق تفصیل کے مطابق کچاکھوہ کا رہائشی 25سالہ نوجوان نیاز حسین ٹرین کے پٹری پر ٹک ٹاک بنا رہا تھاکہ اچانک خانیوال سے لاہور جانے والے موسی پاک کی ٹکر سے نوجوان موقع پر جان بحق ہو گیا دوسرے حادثہ میں صابر چوک سے 18پل کے قریب دوموٹر سائیکلوں کی آپس میں ٹکرانے سے سہوانوالہ کا ریائشی محمد شریف سہواور بیرون پل کا رہائشی ریاض حسین موقع پرجان بحق ہوگئے تھانہ کچاکھوہ پولیس نیقانونی کاروائی کے بعد نعشوں کو ورثا کے حوالے کردیا۔ جبکہ مظفرگڑھ کے نواحی علاقے رنگپور میں 72 سالہ بزرگ شہری محمد شمیر ولد خدا بخش بکریاں چراتے ہوئے حیات کینال میں گر کر ڈوب گیا شہریوں نے اپنی مدد آپ کے تحت اسے نہر سے نکال لیا لیکن تب تک وہ دم توڑ چکا تھا۔اطلاع ملنے پر ریسکیو 1122 ایمبولینس سٹاف نے جائے حادثہ پر پہنچ کر اس ڈوبنے والے شخص کا طبی معائنہ کرنے کے بعد اس کی موت کی تصدیق کرتے ہوئے ڈیڈ باڈی کو اس کے گھر منتقل کر دیا ہے۔ادھر مظفرگڑھ کے علاقے محمود کوٹ کی  بستی ڈتن والا کے ملک طالب ہانس کی ڈیڑھ سالہ بچی عروبہ گھر کے صحن میں کھیلتے ہوئے اچانک ہی گھر سے باہر نکل گئی اور قریب موجود پانی کے گڑھے میں گر گ جب بچی کی والدہ کو کچھ دیر تک بچی نہ ملی تو والدہ نے بچی کو تلاش کیا، شک ہونے پر پانی کے گھڑے کو چیک کیا تو بچی گھڑے میں مل گئی۔ والدہ نے  پچی کو گڑھے سے نکالا، بچی کی حالت نازک ہونے کی وجہ سے اسے نزدیکی بنیادی مرکز صحت محمود کوٹ لے گئے مگر زیادہ دیر ہونیکی وجہ سے طالب حسین کی معصوم ڈیڑھ سالہ بچی عروبہ اللہ کو پیاری ہوگئی۔جبکہ عید کی خوشیاں آہوں اور سسکیوں میں تبدیل،رشتہ داروں کو عید ملنے دوکوٹہ جانیوالا خاندان حادثہ کا شکار،باپ بیٹا جاں بحق،والدہ اور ایک بچہ شدید زخمی ریسکیو ذرائع کے مطابق 9,11 ڈبلیو بی کا رہائشی حافظ شفیع اپنے بیوی بچوں کے ہمراہ رشتہ داروں کو عید ملنے کیلئے جارہا تھا کہ کرم پور روڈ 68 کے بی کے علاقہ میں اس کا موٹر سائیکل بے قابو ہو کر پھسل گیا جس کے نتیجہ میں  حافظ شفیع اور اس کا بیٹا احسان نور موقع پر جاں بحق جبکہ اس کی بیوی اور دوسرا بیٹا شدید زخمی ہوگئے زخمی اور نعشوں کو ریسکیو ٹیم نے ہسپتال منتقل کردیا عید کے دن دو نعشیں علاقہ میں پہنچنے پر کہرام برپا ہوگیا ہر آنکھ اشکبار دکھائی دی، جبکہ ٹریفک حادثے میں شدید زخمی ہونے والے 4 افراد ہسپتال میں دم توڑ گئے۔  ٹریفک کا پہلا حادثہ صادق آباد کے رہائشی زین العابدین کے ساتھ پیش آیا جو اپنے موٹر سائیکل پر سوار ہو کر جا رہا تھا کہ تیز رفتاری کے باعث سامنے سے آنے والے تیز رفتار موٹر سائیکل سوار سے ٹکرا گیا اور شدید زخمی ہوگیا دوسرا حادثہ چک 71 کے رہائشی30 سالہ اقبال کے ساتھ پیش آیا جو اپنے موٹر سائیکل پر سوار ہو کر جا رہا تھا کہ تیز رفتاری کے باعث سامنے سے آنے والے ٹرالر سے ٹکرا گیا اور شدید زخمی ہو گیا تیسرا حادثہ گھوٹکی کے رہائشی55 سالہ منیر کے ساتھ پیش آیا جسے سڑک کراس کرنے کے دوران تیز رفتار ٹرک نے ٹکر مار دی جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہو گیا جبکہ چوتھا حادثہ کاچھا کے رہائشی45 سالہ جلیل کے ساتھ پیش آیا جو اپنے موٹر سائیکل پر سوار ہو کر جا رہا تھا کہ تیز رفتاری کے باعث سامنے سے آنے والی کار سے ٹکرا گیا اور شدید زخمی ہو گیا۔ زخمی ہونے والے تمام افراد کو ورثا نے طبی امداد کیلئے شیخ زید ہسپتال منتقل کیا جہاں طبی امداد کے باوجود تمام افراد جانبر نہ ہو پائے اور دم توڑ گئے۔ادھر عید کے مو قع پر تین دنوں میں ٹریفک حادثہ کے مختلف واقعات میں بچوں،خواتین سمیت 16افراد زخمی ہوگئے،نشتر ہسپتال منتقل کیاگیا ہے۔تفصیل کیمطابق تھانہ بستی ملوک کے علاقے آراپلی کیقریب دوموٹرسائیکلیں آپس میں ٹکرانے سے26سالہ جاوید،50سالہ خادم حسین، 52سالہ امیراں مائی زخمی ہوگئے،اسی تھانہ کی حدود بلی والا کیقریب تیزرفتار موٹرسائیکل بیقابو ہوکر سامنے سے آنے والی موٹرسائیکل سے ٹکراگئی جس کینتیجے میں 25سالہ طارق،22سالہ طاہر،19سالہ آمنہ،2سالہ ایمان زخمی ہوگئے،تیسرا حادثہ بھی اسی تھانہ کی حدود داواپل بہاولپور روڑ کے قریب تیزرفتار کارنمبری LEE/426کاکیری ڈبہ نمبری BRT/3032سے حادثہ پیش آیا،حادثہ کی وجہ سے کیری ڈبہ میں سوار 52سالہ مختیاراحمد،48سالہ نسیم بی بی زخمی ہوئے جبکہ کارڈرائیور اپنی کار چھوڑ کر فرار ہونیہوگیا،تھانہ سٹی جلالپور کیعلاقے بھی ٹریفک حادثہ کینتیجے میں 30سالہ عمران، 28سالہ پروین،30سالہ عمر،25سالہ شبانہ،7سالہ مصباح اور 3سالہ عیان زخمی ہوگئے، حادثات کیواقعات کی اطلاعات پر متعلقہ پولیس نے جائے وقوعہ پر پہنچ کر زخمیوں کو موقع پر ابتدائی طبی امداد دینیکیبعد نشتر ہسپتال و نجی ہسپتال منتقل کردیاگیااور پولیس نے واقعات کیمتعلق کارروائی شروع کردی ہے۔ جبکہ  خانپور کی 25 سالہ فوزیہ چک 131 کی 20 سالہ تنزیلہ اور بھٹہ واہن کے 30 سالہ راشد نے آئے روز کے گھریلو جھگڑوں اور مالی پریشانیوں سے دلبراشتہ ہوکر کالا پتھر اور زہریلا سپرے پی لیا حالت غیر ہونے پر ورثا نے طبی امداد کیلئے شیخ زید ہسپتال منتقل کیا جہاں انہیں طبی امداد فراہم کی جا رہی ہے۔

حادثات

مزید :

ملتان صفحہ آخر -