امیر الدین میڈیکل کالج نے کامیابی کا سفر طے کر لیا،انجم حبیب

امیر الدین میڈیکل کالج نے کامیابی کا سفر طے کر لیا،انجم حبیب

  

لاہور(کامرس رپورٹر)پرنسپل پوسٹ گریجویٹ میڈیکل انسٹی ٹیوٹ پروفیسر انجم حبیب وہرہ نے بتایا کہ لاہور جنرل ہسپتال سے منسلک امیرالدین میڈیکل کالج نے اپنے قیام کے بعد دو سال کا سفر کامیابی سے طے کرلیا اور کل ایم بی بی ایس کے تیسرے تعلیمی سیشن کا آغاز ہوگا جس میں صوبائی دارالحکومت سمیت صوبے کے دیگر اضلاع سے تعلق رکھنے والے 100طلباءو طالبات میڈیکل کا سفید کوٹ زیب تن کرکے اپنی طبی تعلیم کا حصول شروع کریں گے اس موقع پر منعقدہ تقریب میں فیکلٹی ممبران سمیت طلباءو طالبات شریک ہوں گے۔ صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے پروفیسر انجم حبیب وہرہ نے کہا کہ وزیراعلی پنجاب محمد شہباز شریف نے 2012ءمیں پاکستان کے دل لاہور میں امیرالدین میڈیکل کالج کے نام سے نئے ادارے کی منظوری دی تھی۔

۔ انہوں نے کہاکہ اس کالج کے قیام سے غریب اور متوسط طبقے کے ایسے ہونہار بچوں کو بھی طب کی تعلیم حاصل کرنے کا موقع ملا جو میڈیکل کالجوں کی کم تعداد اور پرائیویٹ سیکٹر کی مہنگی پڑھائی کے سبب داخلہ لینے سے محروم رہتے تھے۔ انہوں نے کہاکہ امیرالدین میڈیکل کالج کے قیام سے برین ڈرین کی روک تھام میں بھی بڑی مدد ملی ہے اور ہمسایہ ملکوں میں جاکر مہنگی مگر غیر معیاری طبی تعلیم حاصل کرنے میں بھی خاطر خواہ کمی ہوئی ہے۔ پروفیسر انجم حبیب وہرہ نے بتایا کہ امیرالدین میڈیکل کالج میں زیر تعلیم بچے اس لحاظ سے بڑے خوش قسمت ہیں کہ انہیں ایسے اساتذہ سے تدریس کے مواقعے میسر آئے ہیں جو اندرون و بیرون ملک سپیشلائزیشن کی تعلیم دے رہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعلی محمد شہباز شریف صحت کے شعبے اور میڈیکل کی تعلیم کے فروغ کے لیے قابل تحسین اقدامات کررہے ہیں۔ پروفیسر انجم حبیب وہرہ نے کہا کہ پی جی ایم آئی کے فارغ التحصیل معالجین دیہی بنیادی مراکز صحت سے لے کر ٹیچنگ ہسپتالوں میں مریضوں کے علاج معالجے اور میڈیکل کالجوں میں درس و تدریس کی خدمات مو¿ثر طریقے سے انجام دے رہے ہیں یہ ڈاکٹر بیرون ملک میں بھی نہایت عزت کی نگاہ سے دیکھے جاتے ہیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -