نمونیا سے بچاﺅ کا بہترین طریقہ خوراک میں احتیاط اور ویکسین ہے، عبدالوحید سلیمانی

نمونیا سے بچاﺅ کا بہترین طریقہ خوراک میں احتیاط اور ویکسین ہے، عبدالوحید ...

  

لاہور(پ ر)نمونیا پھیپھڑوں میں ہونے والی انفیکشن ہے جس کی زیادہ تر وجہ بیکٹریا وائرس یا فنگس ہوتے ہیں نمونیا کے شکار تقریباُُ 45فیصد مریض بچوں میں بیکٹیریا اور فائرس دونوں انفیکشن اکٹھی پائی گئی ہیں پاکستان میں ہر سال تقریباُُ 30ہزار بچے نمونیا سے وفات پا جاتے ہیں سردیوں کے موسم میں STREPنمونیا کا حملہ بڑھ جاتا ہے اس کی علامات میں کھانسی، تھکن، بخار، سانس میں دشواری بلغم اور سینے میں درد شامل ہے اِ ن خیالات کا اظہارادارہ فروغ طب یونانی پاکستان کے زیر اہتمام نمونیا کے عالمی دن کے حوالے سے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے حکیم عبدالوحید سلیمانی، حکیم عروہ وحید سلیمانی ،حکیم عمار وحید سلیمانی،حکیم محمد افضل میو، حکیم سید عمران فیاض، حکیم سید عارف رحیم، حکیم غلام فرید میر،حکیم فیصل باہر صدیقی، حکیم شوکت علی سندھو، حکیم رانا شاہد لطیف اورطبیبہ فرح چوہدری نے کیا اُنھوں نے کہا کہ نمونیا سے بچاﺅ کی بہترین طریقہ خوراک میں احتیاط اور ویکسین ہے جسم میں پانی کی کمی کو دور کرنے کیلئے نمکول والا پانی، گلوکوز، یخنی سوپ چائے کا زیادہ سے زیادہ استعمال کیا جائے عموماُُ کا اٹیک ایک پھیپھڑے پر ہوتا ہے اگر ایک ہی وقت میں دونوں پھیپھڑوں پر ہو جائے تو وہ ڈبل نمونیا کہلاتا ہے۔طب میں اس کا علاج موجود ہے۔ نمونیا کا شکار مریض سے نمو نیا کے جراثیم صحت مند انسان کو منتقل ہو سکتے ہیں۔

 یہ مریض کے کھانسنے اور چھیکنے سے ہوا کے ذریعے داخل ہو جاتے ہیں اور سانس کے ذریعے پھیپھڑوں میں داخل ہو جاتے ہیں۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -