سرکاری سکول کا ٹھیکہ ، تنخواہیں مانگنے پر 10اساتذہ ملازمت سے فارغ

سرکاری سکول کا ٹھیکہ ، تنخواہیں مانگنے پر 10اساتذہ ملازمت سے فارغ

بہاولپور (ڈسٹرکٹ رپورٹر)حکومتی سکول پیف سے ٹھیکے پرلینے والے پرنسپل نے سکول اساتذہ سے جبراًاستعفیٰ لے لیے خواتین اساتذہ کی تذلیل کی اور دھکے دے کرسکول سے نکلوادیا خطرناک نتائج کی دھمکیاں لیڈی ٹیچرز کاپریس کلب کے باہراحتجاج سکول پرنسپل کیخلاف کاروائی کامطالبہ تفصیل کے مطابق گرلز پرائمری سکول فیروزوالاجج والی پلی کی خواتین اساتذہ نے پریس کلب کے باہراحتجاج کیاانہوں نے اس موقع پرصحافیوں کوبتایاکہ(بقیہ نمبر44صفحہ7پر )

19مارچ2016 کوگورنمنٹ گرلز پرائمری سکول فیروزوالا جج والی پلی کوپیف کے ذریعے حکومت نے ٹھیکے پردیااسوقت سکول میں صرف تین اساتذہ تعینات تھیں جن کاسکول سے تبادلہ کردیا گیا ٹھیکے پرلینے والے حافظ حمادجاوید نے چاراساتذہ نمرین تحسین، نورین امین، مبین ارشد اورمبینہ وکیل کوملازمت پررکھا ان اساتذہ نے سرتوڑکوششیں کرکے نہ صرف بچوں کوتعلیم دی بلکہ سکول میں بچوں کی انرولمنٹ میں بھی اضافہ کیااوربچوں کی تعداد38 سے485 تک بڑھ گئی جس کے باعث سکول کوایلمنٹری کادرجہ دیاگیااس میں مزید13 اساتذہ کاتقررکیاگیاسکول ٹھیکیدار نے اساتذہ کوتنخواہوں کی ادائیگی بندکردی اورانہیں گزشتہ پانچ ماہ سے تنخواہیں نہیں دی جارہیں جس پرسکول اساتذہ نے احتجاج کیاتوٹھیکیدار حافظ حمادنے10 اساتذہ کوجبراً ملازمت سے فارغ کرکے ان سے جبراًاستعفیٰ لے لیے اورانہیں بے عزت کرکے سکول سے نکل جانے پرمجبورکیاان پرگھٹیا الزام تراشی کی سکول اساتذہ نے ڈی اوایجوکیشن اقبال خان کوصورتحال سے آگاہ کیالیکن انہوں نے اساتذہ کی کوئی بات نہ سنی خواتین اساتذہ نے پریس کلب کے سامنے احتجاج کیا انہوں نے کہاکہ تنخواہیں مانگنے پرانہیں ملازمتوں سے محروم کیاجارہاہے اوران کی تذلیل کی جارہی ہے انہوں نے بتایاکہ وہ ماسٹرگریجوایٹ اورٹرینڈٹیچرز ہیں لیکن ان کونکال کراب2500 روپے ماہوار والی میڑک اورانڈرمیڑک ٹیچرز کوبھرتی کیاجارہاہے حافظ حماد ہمارے ساتھ غلط باتیں کرتے ہیں اورہماری عزت ونفس کومجروح کیاجاتاہے انہوں نے وزیراعلی پنجاب، کمشنر بہاولپور، ڈپٹی کمشنر سی ای اوتعلیم سے فوری نوٹس لینے تنخواہیں اداکرانے اورمازمتوں پربحال کرانے کامطالبہ کیااس موقع پراہل علاقہ کے افراد نے بتایاکہ جن اساتذہ کونکالاگیاہے وہ انتہائی قابل محنتی اوردیانتدار تھے اہل علاقہ ان پراعتماد کرکے اپنی بچیوں کوسکول بھجواتے تھے جس کے باعث سکول کی تعداد میں اضافہ ہواانہوں نے بھی ان اساتذہ کی ملازمت پربحالی اورحافظ حماد کیخلاف کاروائی کامطالبہ کیا۔

مزید : ملتان صفحہ آخر