صوبے کی 40 تحصیلوں کو تیتر کے شکار کیلئے کھول دیا ہے، سہیل اشرف

      صوبے کی 40 تحصیلوں کو تیتر کے شکار کیلئے کھول دیا ہے، سہیل اشرف

  



لاہور(لیڈی رپورٹر)ڈائریکٹر جنرل وائلڈلائف اینڈ پارکس لیفٹیننٹ (ر)سہیل اشرف نے پنجاب وائلڈ لائف  (پروٹیکشن، پریزرویشن، کنزرویشن اینڈ مینجمنٹ (ترمیم شدہ) ایکٹ 2007 ء کے تحت  تیتر کے شکار کے سیزن  2019-20 ء  کا سرکلر جاری کرتے ہوئے  صوبے کی 40 تحصیلوں کو تیتر کے شکار کے لئے کھول دیا ہے۔اعلامیہ کے مطابق15 نومبر2019 ء سے تیتر کا شکار صرف اتوار کے دن مستند اسلحہ لائسنس، شوٹنگ لائسنس کے ساتھ کھیلا جا سکے گا۔  کالے، بھورے اور سی سی تیتر کی بیگ لمٹ پنجاب وائلڈ لائف  (پروٹیکشن، پریزرویشن، کنزرویشن اینڈ مینجمنٹ (ترمیم شدہ) ایکٹ 2007 ء کے شیڈول ون کے مطابق  ہو گی۔

 شکار کیلئے خو دکا ر ہتھیاروں، ریپیٹرگن، گاڑی /جیپ کا استعمال قطعا منع ہے۔وائلڈلائف سینگچوریز، نیشنل پارکس اورمخصوص علاقے جنہیں ایکٹ کے تحت  تحفظ حاصل ہے وہاں ہر طرح کے شکار کی ممانعت ہو گی۔ خلاف ورزی کی صورت میں حسب ضابطہ قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔پنجاب بھر میں تیتراور سی سی کے شکارکیلئے راولپنڈی، گوجر خان،  جنڈ، فتح جنگ، پنڈ دادنخان، دینہ، چواسیدن شاہ،  پپلاں،  میانوالی، بھلوال، کوٹ مومن، بھکر، کلور کوٹ، فیصل آباد، سمندری، ٹوبہ ٹیک سنگھ، شور کوٹ، چنیوٹ،گوجرانوالہ، وانڈو،ڈسکہ، گجرات، حافظ آباد، شکر گڑھ، منڈی بہاؤ الدین، چیچہ وطنی، پاکپتن، اوکاڑہ،  رائیونڈ، قصور، شیخو پورہ،سانگلہ ہل،ملتان کینٹ، جہانیاں، دنیا پور، بورے والا، کوٹ چٹہ، لیہ، کوٹ ادو  اور منچن آبادکی تحصیلیں کھلی جبکہ بقیہ تمام تحصیلیں تیتر اورسی سی کے شکارکے لیے بند رہیں گی۔ ڈی جی وائلڈ لائف نے جاری کردہ سرکلر میں محکمہ کے تمام ریجنل و ضلعی افسران کو شکار کے لئے ممنوع قرا دیئے گئے علاقوں پر کڑی نگاہ رکھنے اور جاری کردہ احکامات پرہر صورت عملدرآمد یقینی بنانے اور قانون کی کسی بھی قسم کی خلاف ورزی کے مرتکب شکاریوں کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لانے کی ہدایات بھی جاری کر دی ہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1