تھانہ:اساتذہ مالکان سکول اور طلباء میٹرک کمپوزٹ امتحان کیخلاف سراپا احتجاج

تھانہ:اساتذہ مالکان سکول اور طلباء میٹرک کمپوزٹ امتحان کیخلاف سراپا احتجاج

  



تھانہ (نمائندہ  پاکستان)  نجی سکولوں کے مالکان، اساتذہ  اور طلباء نے میٹرک کمپوزٹ امتحان کے خلاف علم بغاوت بلند کر دی۔ اساتذہ کے مطابق مڈل کابورڈ ہو یا نہ ہو لیکن نہم اور دہم کے امتحانات الگ الگ ہوں۔ بیک وقت دونوں امتحانات لینابچے کے ساتھ انتہائی ظلم اور زیادتی ہے۔ تھانہ اور مضافات کے مختلف نجی سکولوں کے مالکان اور اساتذہ سمیت نہم، دہم اور فرسٹ و سیکنڈ ایئر کے طلباء نے احتجاجی جلوس نکالا اور پریس کلب کے سامنے مظاہرہ کرتے ہوئے صوبائی حکومت کے کمپوزٹ پالیسی کے خلاف نعرے بازی کرتے ہوئے شدید الفاظ میں اس کی مخالفت کردی۔ مظاہرے کے بعد سپیریئر لالہ زار سکول اینڈ کالج کے پرنسپل فاروق شاہ اور دیگر سکولوں کے سربراہوں نے اخباری نمائندوں سے باتیں کرتے ہوئے اس امر پر شدید غم و غصے اور تشویش کا اظہار کیا کہ حکمرانوں نے خیبر پختونخوا کو تجربہ گاہ بنایا ہے جہاں نت نئے تجربے کر کے بچوں کے مستقبل سے کھیلتے ہیں۔ فاروق شاہ  سمیت دیگر سربراہوں نے نہم اور دہم کے الگ الگ امتحان کا طریقہ برقرار رکھنے اور بچوں کی مستقبل سے نہ کھیلنے کا مطالبہ کیا ۔ انہوں نے کہا کہ ہائیر ایجوکیشن بی اے اور ایم اے کے بجائے بی ایس اور ایم ایس کرکے طلبہ پر کورس کا بوجھ کم  لیا ہے لیکن نہ جانے کیوں اسکول کے طلباء کے مستقبل سے کھیلنے کا حامی بھر لی گئی ہے۔ 

مزید : صفحہ اول /پشاورصفحہ آخر