سویابین مِیل اور دودھ کی پیداوار

سویابین مِیل اور دودھ کی پیداوار
سویابین مِیل اور دودھ کی پیداوار

  

پاکستان میں گائے اور بھینسوں میں پائے جانے والے بہت سے مسائل میں سے ایک بڑا مسئلہ اچھی اور صاف خوراک نہ ملنا ہے۔

پچھلے کئی برسوں کا یہ مشاہدہ ہے کہ ہمارے جانوروں کی دودھ دینے اور بچے جننے کی استعداد میں نہ صرف یہ کہ اضافہ اور بہتری نہیں ہوئی، بلکہ کئی علاقوں میں کمی اور ابتری کے نمایاں آثار نظر آتے ہیں۔ہماری 75 فیصد سے زائد آبادی دیہات میں رہتی ہے اور کاشتکاری کے ساتھ ساتھ اپنے روز مرّہ اخراجات چلانے کے لئے گائے ، بھینس ، بکری ، چھترے اور دنبے پالے جاتے ہیں، باوجود اس کے کہ کچھ تعداد میں بڑے چھوٹے اور درمیانے سائز کے ان جانوروں کے فارم بھی بنے ہیں اور مزید بھی بن رہے ہیں،لیکن ہمارے دیہات کا ماحول اور کاشتکاری کے لئے محدود آمدن وہ عوامل ہیں، جن کی وجہ سے جلدی بہت بڑی تعداد میں بڑے فارم بننے کے امکانات نہیں ہیں اِس لئے ہمیں زمینی حقائق کو سامنے رکھتے ہوئے اپنی رائے اور تخمینے بنانے چاہئیں۔

اس میں کوئی دوسری رائے نہیں کہ متوازان اورمکمل فیڈ جو اچھی فیڈ ملوں سے بنی ہو، ہی ان جانوروں کو بہترین غذائیت دے سکتی ہے،لیکن مذکورہ حقائق کی بنیاد پر یہ فرض کرنا خوش فہمی ہو گی کہ بہت جلدی ہماری اتنی بڑی آبادی کمرشل فیڈ پر منتقل ہو جائے گی، اِس لئے تمام عوامل ملحوظِ خاطر رکھتے ہوئے یہ تجویز قرین قیاس لگتی ہے کہ فوری طور پر فارمر کی لاگت میں زیادہ اضافہ کئے بغیر انہیں یہ تجویز کیا جائے کہ فی الحال جو گتاوہ اپنی پسند کا بناتے ہیں اسی میں صرف ایک کلو گرام سویا بین مِیل صبح اور ایک کلو گرام سویا بین مِیل شام کے گتاوہ میں ملانا شروع کر دیں تو اس کے ان کو نہایت اچھے نتائج ملیں گے، جس سے نہ صرف یہ کہ دودھ دینے میں اضافہ ہو گا،بلکہ بچے جننے کی استعداد میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہو گا۔

یہاں یہ ذکر کرنا ضروری ہے کہ مقامی سالونٹ انڈسٹری پچھلے تین برس سے بین الاقوامی معیار کاسویا بین مِیل بنا رہی ہے جو صنعت مرغبانی میں مسلسل استعمال ہو رہا ہے اور جس کے حیران کن نتائج سب کے سامنے آ چکے ہیں۔ جب تک مقامی پولٹری انڈسٹری ملاوٹ شدہ غیر معیاری بھارتی سویا بین مِیل پر انحصار کرتی رہی ، مرغیوں کے وزن کرنے کی شرح بمقابل جتنی فیڈ وہ کھاتی تھیں، نہایت ہی مایوس کن رہی، لیکن جب سے مقامی معیاری سویا بین مِیل جو کہ معیاری امریکن سویا بین سیڈ سے تیار ہوتا ہے پولٹری فیڈ میں استعمال ہونا شروع ہوا ہے، برائیلر کے وزن کرنے کی استعداد میں حیران کن اضافہ ہو چکا ہے، جو دنیا کے کسی بھی ملک سے مسابقت رکھتی ہے۔

ہم پورے وثوق سے یہ بات کہہ سکتے ہیں کہ مقامی طور پر تیار شدہ معیاری سویا بین مِیل اگر مذکورہ شرح یعنی ایک کلوگرام صبح کے گتاوہ میں اور ایک کلو گرام شام کے گتاوہ میں ملا کر جانوروں کو کھلایا جائے تو اس کے نتائج مرغیوں سے بھی بہتر آئیں گے اور فارمر کے نفع میں بھی خاطر خواہ اضافہ ہو گا، جبکہ ہمارے جانوروں کی اجتماعی طور پر صحت بھی بہتر ہو جائے گی،اس موضوع پر تحریر کا سلسلہ آئندہ بھی جاری رہے گا۔(ان شاء اللہ )

مزید :

کالم -