چین، عالمی معیشت کا عظیم کھلاڑی

چین، عالمی معیشت کا عظیم کھلاڑی
چین، عالمی معیشت کا عظیم کھلاڑی

  



امریکہ، سفید انسان کی حاکمیت اور آزاد نظام معیشت کے پر چار کوں نے، اپنی عالمی برتری کو قائم دائم رکھنے کے لئے ایک بار پھر ایک طاقتور دشمن تخلیق کر لیا ہے، کیونکہ جاری عالمی نظام حکمرانی کو قائم رکھنے کے لئے ضروری ہے کہ حامیوں اور حلیفوں کو ساتھ رکھا جائے انہیں اپنے ساتھ چلتے اور چلتے ہی رہنے پر مجبور کیا جائے انہیں ایک دشمن کی موجودگی کا احساس دلا کر ڈرایا جائے تاکہ وہ آپ کی چھتر چھایہ میں پڑے رہنے میں ہی عافیت سمجھیں۔امریکہ لاریب ایک سپر طاقت ہے اپنی معاشی، عسکری اور سفارتی قوت اور عظمت کے لحاظ سے بھی اور خوشنما آزاد جمہوری معاشرت کے حوالے سے بھی ایک عظیم اور رہنما ملک و قوم ہے جہاں نظری و فکری اعتبار سے بھی اور عملاً بھی، صہیونیت غالب اور حاکم ہے کیچھ عرصہ پہلے تک یہ بات شاید عام نہیں تھی، لیکن اب پو شیدہ معاملات کھل چکے ہیں کہ امریکہ یہودیوں اور صہیونیوں کی گرفت میں ہے۔ امریکی طاقت کے مراکز، معیشت، صحافت اسلحہ سازی کی صنعت، جدید زری مراکز بشمول سرمائے کی منڈی، بینک وغیرہ سب پنجہ یہود میں ہیں اور وہ اسے اپنے طے شدہ اہداف کے حصول کے لئے استعمال کرتے ہیں۔

امریکہ اس وقت عالمی منظر پر نمبر ون ہے اس کی یہ برتر پوزیشن تقریباً ایک صدی سے قائم ہے جنگ عظیم اول و دوم دیکھ لیں اس کے بعد نصف صدی تک جاری رہنے والی سرد جنگ اور اس کے بعد دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ، امریکہ ہی منظر پر چھایا رہا ہے اشتراکیت کے خلاف جنگ کے نتیجے میں جب متحدہ سوویت ریاست کا خاتمہ ہوااور اس کے کئی خود مختار ملک بن گئے تو امریکی بالادستی اور بھی مستحکم ہو گئی پھر امریکہ نے تہذیبی جنگ کا اعلان کیا تو اسلام اور مسلمان اس جنگ میں فریق قرار پائے۔ گزرے 25/30سالوں کے دوران امریکہ نے مسلمانوں کا بھرکس نکال دیا ہے عسکری اور معاشی طور پر انہیں فنا کر دیا ہے مشرق وسطیٰ میں اسرائیل کی بالادستی قائم کردی گئی ہے فلسطینی عوام کے لئے ایک مملکت کے قیام کا منصوبہ بھی ختم کردیا گیا ہے امریکہ، عربوں کی خواہشات اور حقوق کو بالائے طاق رکھتے ہوئے اسرائیل کی پشت پنا ہی میں ڈٹا ہوا ہے۔

دہشت گردی کے خلاف امریکی جنگ میں پاکستان نے 18سال تک امریکہ کا ساتھ دیا اپنی زمین، فضا اور سمندر امریکیوں کے لئے کھول دئے اپنا انفراسٹرکچر تباہ و برباد کرالیا 100ارب ڈالر کا نقصان بھی اٹھایا 70 ہزار انسانی جانوں کا نذرانہ بھی پیش کیا اس کے باوجود امریکہ پاک بھارت کے درمیان تنازع کشمیر میں بھارت کا حامی ہے ہمیں ثالثی کی طفل تسلیاں دے رہا ہے جبکہ بھارت کو عسکری و معاشی طور پر تعمیر کررہا ہے۔ یہ سب باتیں ظاہر کرتی ہیں کہ مسلمان ذلت اور کمزوری کا شکار ہیں امر یکی صہیونی انہیں تباہ کرنے کے منصوبے پر یکسو ہیں۔ 90کی دہائی میں امریکہ نے اسلام اور مسلمان کی شکل میں جو دشمن تخلیق کیا تھا اسے برباد کیا جا چکا ہے۔ اس لئے اب انہیں اپنی برتری اور چودہراہٹ کو قائم رکھنے کے لئے چین کی شکل میں ایک نیا دشمن تخلیق کرنا پڑ رہا ہے۔

جب 90 کی دہائی میں ”تہذیبوں کی جنگ“ اور سفید فام کی بر تری کے تصور کو اپنایا گیا تو تہذیب اسلامی اور مسلمانوں کی تہذیب کو دشمن قرار دیا گیا تھا اس تصور میں چین اور اس کی بدھ تہذیب کے بارے میں منفی تصورات بیان نہیں کئے گئے تھے،بلکہ بڑھتی پھیلتی پھولتی معشیت کے ساتھ دستِ تعاون دراز کیا گیا یہی وجہ ہے کہ آج امریکہ میں چین، سرمایہ کاری کے اعتبار سے بڑا سٹیک ہولڈر ہے بڑے بڑے امریکی برانڈ ز کو چینی مینو فیکچر رز تیار کر رہے ہیں امریکی عوام انہیں ہاتھوں ہاتھ لے رہے ہیں اسی دور میں ہم نے دیکھا کہ امریکی صدر کے زیراستعمال ”بلیک بیری موبائل“ بھی میڈان چائنا تھا۔ اس میں استعمال ہونے والا سافٹ وئیر امر یکی ساختہ تھا۔ اس وقت بہت سی چینی کمپنیاں امریکہ میں کام کر رہی ہیں اور اسی طرح بہت سی امریکی کمپنیاں چین میں سرمایہ کاری کر چکی ہیں۔

امریکی اور چینی معیشتیں ایک دوسرے پر انحصار کر رہی ہیں یہ باہم انحصار دونوں ممالک کو فائدہ پہنچا رہا ہے، لیکن چین نے اس شراکیت داری اور باہم تعاون کو اپنی تعمیر و ترقی کے لئے زیادہ موثر طریقے سے استعمال کیا ہے اور کر رہا ہے۔ چینی معیشت کی گیرائی اور گہرائی اب پوری دنیا کے سامنے ہے۔جو امریکہ کو ہضم نہیں ہو رہی ہے۔

چینی صدر نے 30ستمبر 2019کو چینی ریاست کے قیام کی 70ویں سالگرہ کے موقع پر چینی کمیونسٹ پارٹی کی زیر قیادت چین کی تعمیر و ترقی پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے 2049میں چینی قوم کو دنیا کے نقشے چھا جانے کی خوشخبری سنائی ہے 2049میں کمیونسٹ چین کے قیام کو 100سال پورے ہو جائیں گے اور چین سوسالہ جدو جہد کے بعد دنیا کی سپر طاقت بن جائے گا۔

گزرے 25/30سالوں کے دوران چینی معیشت اوسطاً10ٰٖ فی صد کی شرح سے پھلتی پھولتی رہی ہے 1980میں شروع ہونے والا ترقی کا سفر چینی معیشت کو 32گنا پر لے گیا ہے اب چینی معیشت دنیا کی حجم کے لحاظ سے دوسری بڑی معیشت بن چکی ہے جبکہ امریکہ دنیا کی سب سے بڑی معیشت کے مقام پر موجود ہے اور اس کی یہ پوزیشن 100سال سے قائم ہے، لیکن اب یہ بات واضح ہو چکی ہے کہ آنے والے چند سال کے دوران امریکہ اپنی موجودہ اوّل پوزیشن برقرار نہیں رکھ سکے گا اور چین دنیا کی سب سے بڑی معیشت کے مقام پر فائز ہوجائے گا۔امریکہ یہ سب کچھ ٹھندے پیٹوں برداشت نہیں کر پا رہا ہے اس نے مستقبل قریب کو بھانپتے ہوئے چین کے خلاف تجارتی جنگ کا محاذ کھول دیا ہے اس نے علی الاعلان چینی مصنوعات کے صارفین کو چین سے دور کرنے کی پا لیسیاں اپنانی شروع کر دی ہیں۔تائیوان اور ہانگ کانگ میں گڑ بڑ شروع کر دی ہے تاکہ چین کو محاذ آرائی میں الجھایا جا سکے۔ ٹیکسوں کے نفاذ کے ذریعے امریکہ میں چینی درآمدات کو مہنگا کر کے اس کی کھپت میں کمی کی جا سکے۔

چین نے 5-Gؒٓلانچ کرکے فنی و تکینکی میدان میں بھی اپنی برتری ثابت کر دی ہے امریکہ اس شعبے میں بھی چین کے مقابل کھڑا ہونے کی کاوشیں کر رہا ہے یورپ کو کہا گیا ہے کہ وہ چینی 5-G مسترد کر دے تاکہ چین اس شعبے میں لیڈ نہ لے سکے، لیکن یورپ نے اس مسئلے پر امریکی مشورے کو ماننے سے انکار کر دیا ہے اور چینی 5-G یورپی مارکیٹ میں بڑی تیزی سے اپنی جگہ بنا رہا ہے۔ امریکہ کھل کھلا کر چین کے خلاف میدان عمل میں آ گیا ہے اور اس نے چین کی بڑھتی ہوئی طاقت اور ترقی کو ”دنیا کے لئے خطرہ“ قرار دے دیا ہے۔

کمیونسٹ چین کی 70ویں سالگرہ کے موقع پر چینی صدر نے چینی قوم کو کمیونسٹ پارٹی کے پرچم چینی تعمیر و ترقی کا خوب ذکر کیا انہوں نے کہا کہ دنیا کی کوئی طاقت انہیں آگے بڑھنے اور بڑھتے ہی چلے جانے سے روک نہیں سکتی ہے۔ چین کو مغرب نے 100سال تک افیون کے نشے میں مبتلا رکھا انہوں نے اس بات کا بھی ذکر کیا کہ دنیا 100سال تک چین کے خلاف معرکہ آراء رہی اسے خواب خرگوش میں مبتلا رکھا ہم 2049 تک چین کو دنیاکی عظیم ترین قوم بنا کر دم لیں گے۔ انہوں نے یہ سب کچھ نعرے یا خالی خولی بیان کی حد تک نہیں کہا، بلکہ تاریخی تناظر میں سچی بات کہی ہے چین کی 70سالہ ترقی کا ریکارڈ یہ بتا رہا ہے کہ چین دنیا کی عظیم ترین ریاست اور چینی دنیا کی عظیم قوم بننے کی نہ صرف صلاحیت رکھتے ہیں،بلکہ وہ عظیم بن بھی رہے ہیں اور بن بھی جا ئیں گے۔ امریکہ نے حسب عادت اور حسب تاریخ ایک نیا دشمن تخلیق کر لیا ہے، لیکن اس مرتبہ اس کا سامنا ایک دیو قامت قوم اور سیسہ پلائی ہوئی ریاست کے ساتھ ہے جو اپنا آپ منوا رہی ہے اور سازشوں کا آہنی ہاتھوں سے قلع قمع کرنا جانتی ہے۔

آزمائش شرط ہے

مزید : رائے /کالم