شارجہ میں مقیم پاکستانی تائیکوانڈو برادرز عمار اشفاق اور سنان اشفاق نے تائیکوانڈو چیمپئن شپ میں طلائی تمغے جیت لئے

شارجہ میں مقیم پاکستانی تائیکوانڈو برادرز عمار اشفاق اور سنان اشفاق نے ...
شارجہ میں مقیم پاکستانی تائیکوانڈو برادرز عمار اشفاق اور سنان اشفاق نے تائیکوانڈو چیمپئن شپ میں طلائی تمغے جیت لئے

  



دبئی (طاہر منیر طاہر) یو اے ای اور کوریا چیمپئن شپ 12 اکتوبر 2019ءکو شارجہ میں ہوئی۔ چوتھی سالانہ تائیکوانڈو چیمپئن شپ میں 230 سے زائد کھلاڑیوں نے حصہ لیا اور اپنی مہارت کے جوہر دکھائے۔ حسب سابق اس بار بھی شارجہ میں مقیم دو پاکستانی بھائی عمار اشفاق اور سنان اشفاق تائیکوانڈو کے کھیل پر چھائے رہے اور بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے طلائی تمغے جیت لئے۔ متذکرہ دونوں بھائی ایک عرصہ سے تائیکوانڈو کھیل رہے ہیں اور خاص مہارت رکھتے ہیں۔

ان دونوں نے دنیا کے دیگر ممالک میں بھی ہونے والے مقابلوں میں حصہ لیا اور تمغے جیتے ہیں۔ مسلسل جیت اور اچھے کھیل کی وجہ سے دونوں بھائیوں کا تائیکوانڈو کھیل کی دنیا میں ایک نام ہے جو پاکستانیوں کیلئے اعزاز کی بات ہے۔ متحدہ عرب امارات کی تائیکوانڈو فیڈریشن، یو اے ای میں جمہوریہ کوریا کے سفارتخانے کے تعاون سے اس کھیل کو فروغ دے رہے ہیں۔ متذکرہ دونوں بھائیوں عمار اشفاق اور سنان اشفاق نے شارجہ کلب ٹیم کی طرف سے کھیلوں میں حصہ لیا اور کامیابی کی نئی تاریخ رقم کردی۔

اس بار عمار اشفاق نے الفجیرہ مارشل آرٹس کلب کے ایک کھلاڑی کو شکست دے کر سونے کا تمغہ جیتا تھا جبکہ سنان اشفاق نے بھی اپنے حریف کو مات دے کر سونے کا تمغہ جیت لیا۔ سنان اشفاق قبل ازیں بھی چاندی کے دو تمغے حاصل کرچکے ہیں۔ سال رواں میں انہوں نے تین تمغے جیت کر اپنے کلب اور پاکستان کا نام روشن کیا ہے۔ عمار اشفاق اور سنان اشفاق پاکستان نیشنل تائیکوانڈو ٹیم کے لئے بھی کھیلتے ہیں۔

یو اے ای کی قومی ٹیم کے کوچ اور شارجہ کلب کے ٹیکنیکل ڈائریکٹر عبداللہ حاتم نے اپنے کلب کی کامیابی پر ٹرافی حاصل کی۔ اس موقع پر امارات میں کوریا کے سفیر کوون یونگ وو بھی موجود تھے۔ انہوں نے دونوں ممالک کے مابین تائیکوانڈو کے فروغ پر خوشی کا اظہار کیا۔ متحدہ عرب امارات کی تائیکوانڈو فیڈریشن کے صدر بریگیڈیئر احمد حمدان عبید احمد الزوری نے بھی مسلسل چوتھی بار کھیل کی سرپرستی کرنے پر کوریا کے سفیر کا شکریہ ادا کیا اور امید ظاہر کی کہ مستقبل میں بھی یہ تعاون جاری رہے گا تاکہ نوجوانوں میں صحت مند کھیل کی سرگرمیاں فروغ پاسکیں۔

مزید : عرب دنیا