میری بدخوئی کے بہانے ہیں​ | میرمہدی مجروح |

میری بدخوئی کے بہانے ہیں​ | میرمہدی مجروح |
میری بدخوئی کے بہانے ہیں​ | میرمہدی مجروح |

  

میری بدخوئی کے بہانے ہیں​

رنگ کچھ اور اُن کو لانے ہیں​

رحم اے اضطراب رحم کہ آج​

اُن کو زخمِ جگر دکھانے ہیں​

کر کے ایفائے عہد کا مذکور​

اپنے احساں اُنہیں جتانے ہیں​

اُس کی شوخی کی ہے کوئی حد بھی​

اک نہ آنے کے سو بہانے ہیں​

اُن بتوں ہی کو حسن دینا تھا​

کیا خدائی کے کارخانے ہیں​

الم و درد و رنج و بیتابی​

یار اپنے یہی پُرانے ہیں​

میں کروں جستجو کہاں جا کر​

اُن کے تو سو جگہ ٹھکانے ہیں​

قافیے کو بدل کے اے مجروحؔ ​

اور اشعار کچھ سنانے ہیں​

شاعر: میر مہدی مجروح

Meri   Bad   Khoi   K   Bahaanay   Hen

Rang   Kuchh   Aor   Un   Ko   Laanay   Hen

 Rehm   Ay   Iztaraab   Rehm   Keh   Aaj

Un   Ko   Zakhm-e-Jigar   Dikhaanay   Hen

​Kar   K   Efaa-e-Ehd   Ka   Mazkoor

Apnay   Ehsaan   Unhen   Jataanay   Hen

 Uss   Ki   Shokhi    Ki   Hay   Koi   Hadd   Bhi

Ik   Na    Aanay   K   Sao   Bahaanay   Hen

 Un   Buton   Hi   Ko   Husn   Daina   Tha

Kaya   Khudaai   K   Kaarkhaanay   Hen

 Alam -o-Dard-o-Ranj-o-Betaabi

Yaar   Apnay   Yahi   Puraanay   Hen

 Main   Karun    Justajoo    Kahan    Jaa   Kar

Un   K   To   Sao   Jagah   Thikaanay    Hen

 Qaafiay   Ko   Badal   K   Ay   MAJROOH

Aor   Ashaar   Kuchh   Sunaanay   Hen

 Poet: Meer   Mehdi   Majrooh

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -