زندگی ایک اذیت ہے مجھے | میرا جی |

زندگی ایک اذیت ہے مجھے | میرا جی |
زندگی ایک اذیت ہے مجھے | میرا جی |

  

زندگی ایک اذیت ہے مجھے

تجھ سے ملنے کی ضرورت ہے مجھے 

دل میں ہر لحظہ ہے صرف ایک خیال

تجھ سے کس درجہ محبت ہے مجھ 

تیری صورت تیری زلفیں ملبوس

بس انہی چیزوں سے رغبت ہے مجھے 

تیز ہے وقت کی رفتار بہت

اور بہت تھوڑی سی فرصت ہے مجھے 

اب نہیں دل میں میرے شوق وصال

اب ہر اک شے سے فراغت ہے مجھے 

اب یوں ہی عمر گزر جائے گی

اب یہی بات غنیمت ہے مجھے

شاعر: میرا جی

(شعری مجموعہ: سہ آتشہ؛سالِ اشاعت،1992)

Zindagi   Teri   Aziyyat   Hay   Mujhay

Tujh   Say   Milnay   Ki   Zaroorat   Hay   Mujhay

 Dil   Men   Har   Lehza    Hay   Sirf   Aik   Khayaal

Tujh   Say   Kiss   Darja   Muhabbat   Hay   Mujhay

Teri   Soorat   ,   Teri   Zulfen  ,   Malboos

Bass   Inhi   Cheezon   Say   Raghbat   Hay   Mujhay

 

Taiz   Hay   Waqt   Ki   Raftaar   Bahut

Aor   Bahut   Thorri   Si   Fursat   Hay   Mujhay

 Ab   Nahen   Dil   Men    Meray   Shoq-e-Visaal

Ab   Har   Ik   Shay   Say   Faraaghat   Hay   Mujhay

 Ab   Yun   Hi   Umr   Guzar   Jaaey   Gi

Ab   Yahi   Baat   Ghaneemat   Hay   Mujhay

  Poet: Meera   Ji

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -