نگری نگری پِھرا مسافر گھر کا رستہ بھول گیا | میرا جی |

نگری نگری پِھرا مسافر گھر کا رستہ بھول گیا | میرا جی |
نگری نگری پِھرا مسافر گھر کا رستہ بھول گیا | میرا جی |

  

نگری نگری پِھرا مسافر گھر کا رستہ بھول گیا

کیا ہے تیرا کیا ہے میرا، اپنا پرایا بھول گیا

کیسے دِن تھے کیسی راتیں، کیسی باتیں گھاتیں تھیں

من بالک ہے پہلے پیار کا سندر سپنا   بھول گیا

یاد کے پھیر میں آ    کر دِل پر ایسی کاری چوٹ لگی

دُکھ میں سُکھ ہے سُکھ میں دُکھ ہے، بھید یہ نیارا   بھول گیا

سوجھ بوجھ کی بات نہیں ہے، من موجی ہے مستانہ

لہر لہر سے جا سر ٹپکا، ساگر گہرا  بھول گیا

جِس کو دیکھو اُس کے دِل میں شکوہ ہے تو اِتنا ہے

ہمیں تو سب کچھ یاد رہا، پر ہم کو زمانہ بھول گیا

کوئی کہے یہ کس نے کہا تھا، کہہ دو جو کچھ جی میں ہے

میراجی کہہ کر پچھتایا اور پِھر کہنابھول گیا

شاعر: میرا جی

(شعری مجموعہ: سہ آتشہ؛سالِ اشاعت،1992)

Nagri   Nagri   Phira    Musaafir   Ghar   Ka   Rasta     Bhool    Gaya

Kaya   Hay   Tera   Kaya   Hay   Mera  ,   Apna   Paraaya   Bhool   Gaya

 Kaisay   Din   Thay   Kaisi   Raaten  ,   Kaisi   Baaten   Kaisi    Ghaaten  Then

Man   Baalak   Hay   Pehlay   Payaar   Ka   Sundar   Sapna   Bhool   Gaya

 Yad   K   Phair   Men   Aa   Kar   Dil   Par   Aisi   Kaari   Chot   Lagi

Dukh   Men   Sukh   Hay   Sukh   Men   Dukh   Hay ,   Bhaid   Yeh   Nayaara   Bhool   Gaya

Soojh   Boojh   Ki   Baat   Nahen   Hay   ,   Man   Maoji   Hay   Mastaana

Lehr   Lehr    Say   Ja   Sar   Tapka   ,   Saagar   Gehra   Bhool   Gaya

 Jiss   Ko   Dekho   Uss   K   Dil   Men   Shikwa   Hay   To   Itna   Hay

Hamen   To   Sab   Kuchh   Yaad   Raha  ,   Par   Ham   Ko   Zamaana   Bhool   Gaya

 Koi   Kahay   Yeh   Kiss   Nay   Kaha    Tha   ,   Keh   Do   Jo   Kuchh   Ji   Men   Hay

MEERA   JI   Keh   Kar   Pachhtaaya   Aor   Phir   Kehna   Bhool   Gaya

 Poet: Meera   Ji

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -