گستاخ فلم کیخلاف دنیابھر میں مظاہرے ،پولیس عاشقانِ رسولﷺپرپل پڑی ،ایک شہید ،متعدد زخمی،گولی چلانے والوں کوامریکہ کاخراج ِتحسین

گستاخ فلم کیخلاف دنیابھر میں مظاہرے ،پولیس عاشقانِ رسولﷺپرپل پڑی ،ایک شہید ...
گستاخ فلم کیخلاف دنیابھر میں مظاہرے ،پولیس عاشقانِ رسولﷺپرپل پڑی ،ایک شہید ،متعدد زخمی،گولی چلانے والوں کوامریکہ کاخراج ِتحسین

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) گستاخ امریکی فلم کیخلاف پاکستان سمیت دنیا بھرمیں شدید احتجاج اورپرتشدد مزاحمت جاری ہے جس دوران کراچی میں ایک عاشق رسولﷺ شہیدہوگیا۔امریکہ نے اس شہادت پر پولیس کے کردار کی تعریف کی ہے جبکہ دنیا بھر کی طرح پاکستان میں بھی امریکی سفارتخانہ بند کرنے اورسفارتی عملہ ملک بدر کرنے کے مطالبات جاری ہیں۔جماعت الدعوہ نے تو امریکہ سے معافی مانگے جانے کی صورت میں حکومت کے خلاف لانگ مارچ کی دھمکی دیدی ہے۔کراچی میں گستاخانہ امریکی فلم کے خلاف مجلس وحدت المسلمین کے زیر اہتمام احتجاجی ریلی نکالی گئی جو نمائش چورنگی سے شروع ہوئی اور امریکی قونصلیٹ کی طرف بڑھی تو ریڈ زون میں داخل ہوتے ہی پولیس نے فائرنگ اور آنسو گیس کی شیلنگ شروع کر دی۔جس سے ایک شخص جاں بحق جبکہ اور افراد زخمی ہو گئے۔ ریلی کے شرکاءرکاوٹوں کو عبور کرتے ہوئے امریکی قونصلیٹ کے قریب پہنچے جہاں انہوں نے پولیس چوکی کو آگ لگا دی اور وہاں کھڑی دو پولیس موبائلز کو بھی جلا دیا۔ پولیس کی طرف سے طاقت کا بے دریغ استعمال کئے جانے پر ریلی کے شرکاءنمائش چورنگی پر جمع ہو گئے جہاں انہوں نے دھرنا دیا اور احتجاج کرتے ہوئے ایک پولیس موبائل کو پٹرول پمپ کو بھی آگ لگا دی۔ نمائش چورنگی پر مظاہرین نے میڈیا کی متعدد گاڑیوں پر بھی پتھراﺅ کیا گیا جس سے متعدد گاڑیوں کے شیشے ٹوٹ گئے جبکہ پولیس اور مظاہرین کے درمیان وقفے وقفے سے فائرنگ کا سلسلہ جاری ہے ۔ راولپنڈی میں سنی تحریک کے کارکنوں نے ریلی نکالی جس کے شرکاءنے بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر امریکہ کے خلاف نعرے درج تھے۔ مظاہرین امریکی پرچم بھی جلایا ۔ پشاور میں سب سے بڑا احتجاجی مظاہرہ جی ٹی روڈ پر کیا گیا جس میں ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔ ریلی کے شرکاءنے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ امریکہ کے ساتھ سفارتی تعلقات ختم کئے جائیں۔ کوئٹہ میں مختلف سیاسی جماعتوں نے احتجاجی مظاہرے کئے اور شرمناک حرکت کی شدید مذمت کی۔ حید رآباد میں امریکی ہسپتال کے سامنے مظاہرے میں امریکہ کے خلاف نعرے لگائے گئے۔مظفر آباد میں ریلی کے شرکاءنے امریکی صدر اور پادری ٹیری جونز کے پتلے جلائے۔لاہورمیں جماعت الدعوة نے گستاخانہ فلم نیلا گنبد سے مسجد شہداءتک ریلی نکالی جس میں ہزاروں افراد نے شرکت کی۔ ریلی کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے جماعت الدعوة کے امیر حافظ سعید نے کہا کہ اگر حکمرانوں نے گستاخانہ فلم کے حوالے سے اپنی ذمہ داری ادا نہ کی تو پھر فیصلے بھی ہوں گے اور ان پر عملدرآمد بھی کیا جائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ ”جب تک گستاخانہ فلم بند نہیں کی جاتی، ذمہ داریوں کو پھانسیاں نہیں دی جاتیں، صاف کہہ دو کہ پاکستان میں امریکی سفارتخانہ نہیں چل سکتا، تمہاری دہشت گردی کے خلاف ہم انشاءاللہ جہاد شروع کریں گے“۔ انہوں نے کہا کہ لانگ مارچ کا لائحہ عمل طے کرنے کیلئے جلد ہی آل پارٹیز کانفرنس بلائی جائے گی، جس میں نواز شریف ، عمران خان کو دعوت دیں گے اور زرداری کو بھی دعوت دیں گے، دنیا دیکھے گی کہ اللہ کے رسول کا محب کون ہے اور کون منافقت کر رہا ہے۔ ریلی کے شرکاءسے اعجاز الحق، حافظ عبدالرحمان مکی سمیت دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔ جماعت اسلامی پاکستان کے امیر سید منور حسن نے کہا کہ حکمرانوں میں اتنی جرات نہیں کہ توہین آمیز فلم بنانے پر امریکی سفیر کو بلا کر اس کی سرزنش کریں۔ اس واقعے میں ایم کیو ایم کے ملوث ہونے کے واضح ثبوت موجود ہیں۔ اس موقع پر لیاقت بلوچ نے کہا کہ اگر حکومت نے امریکیوں کا احتساب نہ کیا تو جماعت اسلامی امریکی سفارتخانے کا گھیراﺅ کرے گی۔دوسری جانب اسلام آبادمیں امریکی سفارتخانے سے جاری ہونے والے بیان میںامریکہ نے گستاخ فلم کے خلاف امریکی قونصل خانے کے سامنے احتجاج روکنے کیلئے پولیس کی مظاہرین پر فائرنگ کے اقدام کو سراہا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکی قونصل خانے کی حفاظت کیلئے پولیس کی کوششوں کو سراہتے ہیں جبکہ ان کوششوں کی وجہ سے کراچی میں قونصل خانے کے عملے کے تمام ارکان محفوظ ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکی حکومت کا گستاخانہ فلم سے کوئی تعلق نہیں،گستاخانہ فلم کے مواد اور پیغام کو یکسر مسترد کرتے ہیں۔وسطی لندن میں سینکڑوں افراد نے مظاہرہ کیا اور امریکہ کے خلاف نعرے لگائے۔ بیلجئیم میں متنازعہ فلم کے خلاف نوجوان سڑکوں پر نکل آئے اور امریکہ کے خلاف نعرے بازی کی، پولیس نے متعدد افراد کو گرفتار کر لیا۔ مقبوضہ کشمیر کے دارالحکومت سرینگر میں بھی سینکڑوں افراد نے مظاہرہ کیا۔ مقبوضہ کشمیر کے علماءکا کہنا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں امریکیوں پر حملے ہو سکتے ہیں اس لئے وہ وادی چھوڑ دیں۔ قطر اور ترکی میں بھی احتجاجی مظاہرے ہوئے اور امریکی پرچم نظر آتش کئے گئے۔تیونس اور سوڈان میں امریکی سفارتخانوں سے غیر ضروری عملہ واپس بلا لیا گیا جبکہ کیلیفورنیا میں متنازعہ فلم کا پروڈیوسر روپوش ہو گیا ہے۔

مزید : لاہور