کسان تنظیموں نے وفاقی حکومت کا اعلان کردہ ریلیف پیکیج یکسر مسترد کر دیا

کسان تنظیموں نے وفاقی حکومت کا اعلان کردہ ریلیف پیکیج یکسر مسترد کر دیا

لاہور ( اسد اقبال )زمیندار ، کا شتکار اور کسان تنظیموں نے وفاقی حکو مت کی جانب سے اعلان کر دہ کسان ریلیف پیکج کو یکسر مستر د کر تے ہوئے شدید تحفظات کا اظہار کر تے ہوئے کہا ہے کہ حکو متی ارکان ماضی کی طر ح کسانوں تک ریلیف نہیں پہنچنے دیں گے جبکہ حکو مت بھی بے حسی کا مظاہرہ کر تے ہوئے کسانوں کو سبز باغ دکھانے کی بجائے عملی طور پر اقدامات نہیں اٹھاتی ۔وفاق کی جانب سے ملک کے 65فیصد زرعی شعبہ سے تعلق رکھنے والے افراد کے لیے 341ارب روپے کا ریلیف پیکج اونٹ کے منہ میں زیر ے کے مترادف ہے لہذا حکو مت زرعی پالیسیوں میں اصلاحات لاتے ہوئے بھارت کی طرح اپنے کسانوں کو ریلیف اور زرعی مداخل پر سبسٹڈی دے ۔ ’’پاکستان ‘‘سے گفتگو کر تے ہوئے پاکستان متحدہ کسان محاذ کے سر براہ ایو ب میؤ نے کہا کہ کسان تنظیموں کو حکو مت کی جانب سے اعلان کر دہ ریلیف پیکج پر شد ید تحفظا ت ہیں جس پر عملدرآمد نہ ہو گا اور یہ صر ف بلدیاتی انتخابات میں ہمدردیاں حاصل کر نے کے لیے ایک سازش ہے انھوں نے کہا کہ ماضی گواہ ہے کہ گزشتہ سال بھی وزیر اعظم نے فی ایکڑ رقبہ رکھنے والے کاشتکار کے لیے 5ہزار روپے ریلیف پیکج کا اعلان کیا گیا جس پر تاحال عملدرآمد نہ ہو سکا ہے ۔ پاکستان رائس ملز ایسو سی ایشن کے چیئر مین مختار احمد خان نے کہا کہ رائس ملز مالکان حکو متی زرعی پیکج کو مستر د کر تے ہیں کیو نکہ اس پیکج میں رائس کے حوالے سے کو ئی ریلیف نہ دیا گیا ہے جبکہ ملک میں اس وقت حکو متی ناقص زرعی پالیسیوں کی بدولت 5 لاکھ ٹن چاول گوداموں میں پڑا ہے ۔جس کو حکو مت خرید کر رائس ملز مالکان کو نقصان سے بچائے انھوں نے انتباہ کیا ہے کہ اگر حکو مت نے رائس کے حوالے سے کوئی اقدامات نہ اٹھائے تو رواں سال کسانوں سے مو نجھی نہیں خریدیں گے۔پاکستان ایگری فور م کے وائس چیئر مین راؤ افسر نے کہاکہ ایگری فورم زرعی پیکج کو مستر د کر تی ہے کیو نکہ اس میں حکو مت نے ہمیشہ کی طرح کسانوں کو سنہرے خواب ہی دکھائے ہیں انھوں نے کہا کہ ماضی گواہ ہے کہ حکو مت کی جانب سے کھاد پر سبسٹڈی کے اعلان کے باوجو د کسانوں کو سستے دامو ں کھاد میسر نہ ہو سکی جبکہ یو ریا کی قیمت میں ہوشر با اضافہ کر کے سیزن میں معمو لی کمی کر کے بھی کسانوں کا استحصال کیا گیا ۔کسان راج تحریک کے چیئر مین ارسلان خان خاکوانی نے کہا کہ حکو مت کے اعلان کر دہ پیکج کو مستر د کر تے ہیں کیو نکہ ہمیشہ کسانوں کا استحصال کر کے زراعت دشمن پالیسیاں بنائی گئی انھوں نے کہا کہ ہمسایہ ممالک بھارت میں کسانوں کو نہ صر ف ریلیف دیا جاتا ہے بلکہ مفت بجلی سمیت زرعی مداخل پر سبسٹڈی دی جاتی ہے جس کے پیش نظر بھارت کے کسان خو شحال ہیں۔پاکستان کسان اتحاد کے چیئر میں خالد کھو کھر نے کہا کہ زرعی پیکج کے ثمرات کسانوں تک نہیں پہنچیں گے کیو نکہ حکو متی ارکان کسانوں کو ریلیف دینے کی بجائے ریلیف پیکج میں خو رد بر د کر تے ہیں ۔انھوں نے وفاقی حکو مت سے مطالبہ کیا ہے کہ کسانوں کو حقیقی ریلیف دینے کے لیے دہلیز پر سبسٹڈی دی جائے جبکہ ریلیف پیکج کی رقم میں اضافہ کیا جائے ۔

مزید : صفحہ اول


loading...