اگلے ماہ سائنسدانوں نے ایک ایسا تجربہ کرنے کا فیصلہ کرلیا جس کی وجہ سے دنیا ختم ہوسکتی ہے، لاکھوں لوگ خوف میں ڈوب گئے کیونکہ۔۔۔

اگلے ماہ سائنسدانوں نے ایک ایسا تجربہ کرنے کا فیصلہ کرلیا جس کی وجہ سے دنیا ...
اگلے ماہ سائنسدانوں نے ایک ایسا تجربہ کرنے کا فیصلہ کرلیا جس کی وجہ سے دنیا ختم ہوسکتی ہے، لاکھوں لوگ خوف میں ڈوب گئے کیونکہ۔۔۔

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی سائنسدانوں نے آئندہ ماہ ایک ایسا تجربہ کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے کہ پوری دنیا میں خوف پھیل گیا ہے کیونکہ اس تجربے کی وجہ سے ہماری دنیا کا خاتمہ بھی ہو سکتا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق خلائی مخلوق کے وجود کے متعلق تحقیقات کرنے والی امریکی ریاست سان فرانسسکو کی سائنسی تنظیم ایم ای ٹی آئی کے سائنسدانوں نے اعلان کیا ہے کہ وہ آئندہ ماہ خلائی مخلوق سے رابطہ کرنے کے لیے مختلف پیغامات آسمان کی وسعتوں میں بھیجنے کا تجربہ کریں گے۔ ان کے اس اعلان کے جواب میں پروفیسر سٹیفن ہاکنگ سمیت کئی ماہرین نے متنبہ کیا ہے کہ اگر اس تجربے کے ذریعے خلائی مخلوق سے واقعی رابطہ ہو گیا اور انہیں زمین پر انسانی موجودگی کا علم ہو گیا تو وہ ہماری زمین سے زندگی کا خاتمہ کر سکتے ہیں۔

’23ستمبر کو پوری دنیا میں بدترین زلزلے آئیں گے کیونکہ۔۔۔‘ انتہائی خوفناک پیشنگوئی کردی گئی

ایم ای ٹی آئی کے صدر ڈوگلس ویکوچ کا کہنا تھا کہ ”اب انسان کے کائنات میں چھپ کر رہنے کا وقت نہیں رہا چنانچہ اب ہمیں فیصلہ کرنا چاہیے کہ ہم کیسے دیگر مخلوق کے سامنے خود کو ظاہر کرتے ہیں۔ممکن ہے خلائی مخلوق پہلے ہی ہمارے بارے میں جانتی ہو، ہم سے بات کرنا چاہتی ہو اور اس کے لیے ہماری طرف سے کسی واضح اشارے کی منتظر ہو۔ چنانچہ ہمارے لیے یہ بہتر ہو گا کہ طاقتور ٹرانسمیٹر کے ذریعے ہم انہیں پیغام بھیجیں۔“خلائی مخلوق کی طرف بھیجے جانے والے متوقع پیغامات کے مندرجات کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے ڈوگلس ویکوچ کا کہنا تھا کہ ”پیغامات کے مندرجات کا فیصلہ کرنا ہمارے لیے بہت مشکل کام ہے۔ ہم ابتداءمیں مکمل گفتگو کی بجائے چند بہت واضح اور آسان پیغامات بھیجنا چاہتے ہیں تاکہ خلائی مخلوق آسانی سے انہیں ڈی کوڈ کرکے سمجھ سکے۔ پہلے چند پیغامات میں ہم ریاضی اور طبیعات کی چند لازمی چیزیں بھیجیں گے۔ہم یہ پیغامات زمین کے قریبی ستاروں پر بھیجیں گے، بالخصوص ان ستاروں پر، جہاں زندگی کا وجود ممکن ہو سکتا ہے۔“

دوسری طرف پروفیسر سٹیفن ہاکنگ کا کہنا تھا کہ ”اگر خلائی مخلوق کو ہماری زمین اور اس پر ہم انسانوں کی موجودگی کے بارے میں پتا چل گیا تو ممکنہ طور پر وہ اسے فتح کرنے اور یہاں اپنی آبادی بسانے کی کوشش کریں گے اور اس کے لیے وہ ہم انسانوں کا خاتمہ کر دیں گے۔ اور اگر وہ صرف یہاں ہم سے ملنے کے لیے آ جاتے ہیں تو اس کے نتائج بھی کچھ اچھے نہیں ہوں گے۔ یہ بالکل اسی طرح ہو گا جیسے کولمبس نے امریکہ دریافت کیا تھا جو کسی بھی طور مقامی امریکیوں کے لیے بہتر ثابت نہیں ہوا، اور دیگر دنیا سے آنے والے امریکہ پربہت حد تک غالب آ چکے ہیں۔اسی طرح خلائی مخلوق بھی ہم انسانوں پر غالب آ جائے گی اور ہم اپنی ہی زمین پر اجنبی بن کر رہ جائیں گے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -