’امریکہ تباہی کے دہانے پر آگیا، چند دنوں میں معیشت کے دھوئیں نکل جائیں گے کیونکہ۔۔۔‘ پوری دنیا پر رعب جمانے والا خود ہی سب سے بڑی مشکل میں پھنس گیا

’امریکہ تباہی کے دہانے پر آگیا، چند دنوں میں معیشت کے دھوئیں نکل جائیں گے ...
’امریکہ تباہی کے دہانے پر آگیا، چند دنوں میں معیشت کے دھوئیں نکل جائیں گے کیونکہ۔۔۔‘ پوری دنیا پر رعب جمانے والا خود ہی سب سے بڑی مشکل میں پھنس گیا

  

واشنگٹن(نیوز ڈیسک) ایک دہائی قبل امریکا میں آنے والے مالیاتی بحران کے اثرات ابھی پوری طرح ختم نہیں ہوئے تھے کہ اقتصادی ماہرین نے اس سے کہیں بڑے نئے بحران کی وارننگ جاری کر دی ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ امریکا اپنی تاریخ کے بدترین کرنسی بحران کی جانب بڑھ رہا ہے، جو اس قدر سنگین ہوگا کہ دنیا پر امریکہ کے معاشی غلبے کا خاتمہ کردے گا۔

یوروپیسفک کیپیٹل کے سی ای او پیٹر شیف نے اس بارے میں ڈیلی سٹار آن لائن سے بات کرتے ہوئے بتایا ”میرا خیال ہے کہ ہم ڈالر بحران کی جانب بڑھ رہے ہیں جبکہ قرضوں کا بحران بھی سنگین ہونے والا ہے۔ 10 سال قبل آنے والے بحران نے مارگیج، سکیورٹیز اور بینکوں کو زیادہ تر متاثر کیا لیکن اس بار یہ ذرا مختلف ہوگا۔ حکومت نے اس صورتحال میں مالیاتی اداروں کی مدد کیلئے فنڈز جاری کردئیے ہیں جو مسئلے کو اور سنگین بنادے گا۔

ساری دنیا کی نظریں شمالی کوریا پر لیکن بڑی جنگ کسی اور جگہ شروع ہونے والی ہے، وہ جگہ جہاں ہزاروں امریکی اور روسی فوجی ایک دوسرے کے سامنے آگئے

اب ہم ایک بڑے بحران کے کنارے پر کھڑے ہیں جو اس بار صرف پرائیویٹ سیکتر تک محدود نہیں ہوگا بلکہ یہ بیرونی مارکیٹوں تک جائے گا اور ڈالر کو شدید متاثر کرے گا۔ کرنسی کے کمزور ہونے پر بانڈ مارکیٹ میں بحران آئے گا، تب امریکی حکومت کو ایک اہم فیصلہ کرنا ہوگا، یعنی بیرونی قرضوں کے ضمن میں خود کو دیوالیہ قرار دیا جائے یا ڈالر کو تباہ کیا جائے۔ یہ بہت بڑا بحران ہے، اس سے نکلنے کا کوئی راستہ نہیں ہے۔“

پیٹر شیف کا مزید کہناتھا کہ ”ضروری نہیں ہے کہ اس بار امریکہ کے بحران کا باقی دنیا پر بھی منفی اثر مرتب ہو۔ برطانیہ اور دیگر بڑی معیشتیں اگر ڈالر کو ناکام ہونے دیں تو ان کو بہت فائدہ حاصل ہوسکتا ہے۔ ڈالر کے کمزور ہونے سے امریکہ میں غربت میں اضافہ ہوگا اور امریکیوں کی قوت خرید کم ہوجائے گی۔ ایسی صورت میں عالمی مارکیٹوں میں اشیاءکی قیمتیں کم ہوں گی اور خصوصاً غریب ممالک کے عوام کیلئے سہولت پیدا ہوگی۔

شمالی کوریا کی جانب سے ایٹمی دھماکوں کے بعد ہمسایہ ممالک میں کیا خطرناک ترین چیز تیزی سے پھیلنے لگی؟ اب تک کی سب سے خطرناک خبر آگئی

دیگر ممالک کے لئے مسئلہ اس وقت بنتا ہے جب وہ خوفزدہ ہوکر کرنسی چھاپنا شروع کردیتے ہیں تاکہ ڈالر کو گرنے سے روکا جائے۔ حالانکہ اگر وہ ڈالر کو گرنے دیں تو امریکہ اس کے نتائج میں بری طرح پھنس جائے گا۔ امریکہ میں شرح سود بڑھ جائے گی، مہنگائی میں اضافہ ہوجائے گا، معیار زندگی گرے گا، بلکہ مجموعی طور پر معیشت کا دیوالیہ نکل جائے گا۔“

مزید :

بین الاقوامی -