کیا آپ کو معلوم ہے Bitcoin کیا ہے اور پچھلے 2 دنوں میں اس کی وجہ سے انٹرنیٹ صارفین کے اربوں روپے کیسے ڈوب گئے؟ جانئے انتہائی مفید معلومات

کیا آپ کو معلوم ہے Bitcoin کیا ہے اور پچھلے 2 دنوں میں اس کی وجہ سے انٹرنیٹ صارفین ...
کیا آپ کو معلوم ہے Bitcoin کیا ہے اور پچھلے 2 دنوں میں اس کی وجہ سے انٹرنیٹ صارفین کے اربوں روپے کیسے ڈوب گئے؟ جانئے انتہائی مفید معلومات

  

نیویارک(نیوز ڈیسک) دنیا بھر میں درجنوں اقسام کی کرنسیاں استعمال ہوتی ہیں جن سے ہر کوئی واقف ہے لیکن بہت کم لوگ ہیں جو ’بٹکوئن‘ (bitcoin) نامی کرنسی کے بارے میں جانتے ہیں۔ یہ ایک دیجیٹل کرنسی ہے، یعنی اسے ڈالر، پاﺅنڈ یا روپے کی طرح پرنٹ نہیں کیا جاتا بلکہ اس کا وجود صرف کمپیوٹر سافٹ وئیر کی شکل میں ہوتا ہے۔عام کرنسی کے برعکس اسے کسی ملک کی حکومت کنٹرول نہیں کرتی بلکہ یہ مکمل طور پر آزاد کرنسی ہے۔ اس کرنسی میں خرید و فروخت کرنے کے لئے انٹرنیٹ پر بٹکوئن ایڈریس بنایا جاتا ہے، جس کی کوئی فیس نہیں۔ بٹکوئن ایڈریس رکھنے والے اس کرنسی کے ذریعے بآسانی ادائیگی اور وصولی کر سکتے ہیں۔

یوں تو دنیا میں اور بھی ڈیجیٹل کرنسیاں استعمال ہوتی ہیں، جیسا کہ ایتھر ٹوکن (ether token) ، لیکن بٹکوئن جیس مقبولیت کسی اور ڈیجیٹل کرنسی کو حاصل نہیں ہو سکی۔اس کی مقبولیت کا اندازہ اس بات سے کیا جا سکتا ہے کہ صرف رواں سال کے دوران اس کی قدر میں 250 فیصد کا اضافہ ہوا، لیکن ہمیشہ اس کی قدر میں اضافہ نہیں ہوتا بلکہ بعض اوقات بھاری کمی بھی ہو جاتی ہے۔

خاتون کے فیس بک پر ایک click نے اسے6 لاکھ ڈالرز سے محروم کر دیا ،جانئے اور آپ بھی احتیاط کریں کیونکہ۔۔۔

کچھ ایسا ہی معاملہ گزشتہ دو دن کے دوران پیش آیا، جس نے دنیا بھر میں بٹکوئن کے مالکوں کے اربوں ڈالر ڈبو دئیے ہیں۔ ویب سائٹ مارکیٹ واچ کی رپورٹ کے مطابق دو دنوں میں بٹکوئن کی قدر میں ہونے والی کمی کا حساب ڈالروں میں کیا جائے تو بٹکون مالکان کے تقریباً 27ارب ڈالر(تقریباً 27 کھرب روپے) ڈوب گئے ہیں۔

اس غیر معمولی کمی کی متعدد وجوہات بتائی جا رہی ہیں لیکن ان میں سے سرفہرست یہ ہے کہ چینی حکومت بٹکوئن کے لین دین کو کنٹرول کرنے کےلئے نئے ضوابط متعارف کروانے والی ہے۔ ایک اندازے کے مطابق بٹکوئن کا 20 فیصد سے زائد لین دین چین میں ہی ہوتا ہے۔ اگرچہ یہ خبریں مصدقہ نہیں کہ چینی حکومت اس ضمن میں کوئی ضوابط متعارف کروانے والی ہے لیکن اس کے باوجود بٹکوئن کی قدر پر ان خبروں کا گہرا اثر مرتب ہوا ہے۔

اسی طرح متعدد عالمی شہرت یافتہ ماہرین مالیات بھی بٹکوئن کو شدید نتقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔ان ماہرین میں سرفہرست نام مشہور مالیاتی ادارے جے پی مارگن چیز اینڈ کمپنی کے سی ای او حیمی ڈائمن کا ہے ، جو بٹکوئن کو محض ایک فراڈ قرار دیتے ہیں۔ حیمی اور ان کے ہم خیال ماہرین کے بیانات نے بھی بٹکوئن کی قدر گرانے میں نمایاں کردار ادا کیا ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -