ٹوبے خشک،مکین زیرزمین مضر صحت پانی پینے پر مجبور

ٹوبے خشک،مکین زیرزمین مضر صحت پانی پینے پر مجبور

بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر)چولستان سے بارشیں روٹھ گئیں ٹوبھے خشک پینے کا پانی نایاب پائپ لائنیں ناکارہ ٹوبہ سکولوں کے سینکڑوں طلبا اور ہزاروں چولستانی زیر زمین مضر صحت پانی پینے پر مجبورٹوبہ سکولوں کے طلبا اور چولستانیوں کا وزیر اعلیٰ پنجاب سے نوٹس لینے کا مطالبہ،چولستان کی سرکردہ شخصیات رئیس لطیف مہر چیئرمین یونین کونسل 178/7Rچولستان کونسلرز ،نمبرداررئیس یوسف حالہ ،حمیر گمنہ،نذر حسین عبدالغفور، فتح محمد،عمر وڈہ،لعل بخش،مقبول(بقیہ نمبر58صفحہ12پر )

احمد مہر،اور جانو نمبردار نے گریٹ چولستان کے ٹوبھوں میں پانی ختم ہونے پر احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ رواں سال بارشیں کم ہونے سے چولستان میں نوانکوٹ اور بجنوٹ سمیت ارد گرد کے ٹوبھوں میں پینے کا پانی ختم ہو چکا ہے،حکومت کی جانب سے پینے کی پانی کی مسلسل فراہمی کیلئے بچھائی گئی واٹر سپلائی پائپ لائنیں ناکارہ ہو چکی ہیں،صرف قلعہ ڈیراور تک پانی فراہم کر رہی ہیں،ایمرجنسی پانی کی فراہمی کیلئے بوذر بھی ڈیراور قلعہ پر موجود ہیں مگر وہ بغیر مٹھی گرم کئے پانی فراہم نہیں کرتے،انہوں نے کہا کہ نواں کوٹ کے نزدیک مونگر والا ٹوبہ پر ٹوبہ سکول قائم ہے جہاں 60کے قریب طلبا زیر تعلیم ہیں مونگر والا سمیت دیگر ٹوبہ سکولوں کے طالب علم پینے کے صاف پانی سے محروم زیر زمین کڑوا اور مضر صحت پانی پینے پر مجبور ہیں چولستانیوں کا کہنا ہے کہ نواں کوٹ اور بجنوٹ تک ناکارہ پائپ لائنیں موجود ہیں محکمہ چولستان کو بار بار شکایات اور احتجاج کے باوجود عارضی مرمت کر کے دو چار مرتبہ پانی فراہم کیا گیا مگر مستقل طور پر پانی فراہم کرنے سے قاصر ہیں۔انہوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار سے گریٹ چولستان میں مستقل پینے کے پانی کی فراہمی کا مطالبہ کیا ہے۔اس سلسلہ میں جب ایکسین چولستان عاشق لنگاہ سے فون نمبر03468454368پر رابطہ کیا گیاتوانہوں نے نمبرہی اٹینڈنہ کیا۔

مزید : ملتان صفحہ آخر