بل بورڈزکی تنصیب سے متعلق کیس ،سپریم کورٹ کا ڈی ایچ اے،کنٹونمنٹس بورڈزسمیت دیگراداروں کی عمل درآمد پورٹس پر عدم اطمینان کا اظہار

بل بورڈزکی تنصیب سے متعلق کیس ،سپریم کورٹ کا ڈی ایچ اے،کنٹونمنٹس بورڈزسمیت ...
بل بورڈزکی تنصیب سے متعلق کیس ،سپریم کورٹ کا ڈی ایچ اے،کنٹونمنٹس بورڈزسمیت دیگراداروں کی عمل درآمد پورٹس پر عدم اطمینان کا اظہار

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ آف پاکستان میں بل بورڈزکی تنصیب سے متعلق کیس میں ڈی ایچ اے،کنٹونمنٹس بورڈزسمیت دیگراداروں کی عمل درآمد رپورٹ پیش کر دی گئیں ،عدالت نے عملدرآمد پورٹس پر عدم اطمینان کا اظہار کردیا۔جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ بل بورڈز دنیا بھر میں خطرناک قرار دیے گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ آف پاکستان میں سپریم کورٹ میں بل بورڈزکی تنصیب سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی،جسٹس عمرعطا بندیال کی سربراہی میں 3رکنی بینچ نے کی سماعت کی،ڈی ایچ اے،کنٹونمنٹس بورڈزسمیت دیگراداروں کی عمل درآمد رپورٹ عدالت میں پیش کر دی،جسٹس عمر عطابندیال نے کہا کہ بل بورڈزسے متعلق بنائے گئے قوانین عدالت میں پیش کیے جائیں۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ بل بورڈز دنیا بھر میں خطرناک قرار دیے گئے ہیں،بل بورڈزکی دنیا بھر میں حوصلہ شکنی کی گئی ہے،عدالتی حکم میں واضح طور پر پبلک مقامات پر بل بورڈزہٹانےکاحکم دیاگیا،جسٹس عمر عطابندیال نے کہا کہ عدالت نے تواس معاملے میں تمام نظرثانی درخواستیں بھی خارج کر دیں،لطیف کھوسہ ایڈووکیٹ نے کہا کہ ایڈیشنل اٹارنی جنرل کےساتھ میٹنگ میں قواعد و ضوابط طے کیے گئے،جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ طے یہ کرنا ہے کہ پبلک پراپرٹی کے علاوہ کون سی جگہیں ہیں،عدالت نے کہا کہ بل بورڈزلگاتے وقت درخت کی کٹائی اورماحولیاتی آلودگی کے اصولوں کومدنظررکھاجائے۔عدالت نے عملدرآمد پورٹس پر عدم اطمینان کا اظہار کردیا۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد


loading...