آل لوکل گورنمنٹ ایمپلائز کا حکومت سے مطالبات کی منظوری کا مطالبہ

  آل لوکل گورنمنٹ ایمپلائز کا حکومت سے مطالبات کی منظوری کا مطالبہ

  

چارسدہ (بیورورپورٹ) آل لوکل گورنمنٹ ایمپلائز گزینڈ الائنس کے مرکزی صدر سید فضل غفار باچا نے حکومت سے فوری طور پر تمام سرکاری ملازمین کو بلا تفرق جدید ٹائم سکیل دینے، مہنگائی کی شرخ کو مد نظر رکھتے ہوئے تنخواہوں میں سو فیصد اضافہ کرنے اور سرکاری ملازمین پر آئی ایم ایف کا اثر رسوخ ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔ مطالبات منظور نہ ہونے کی صورت میں  چوبیس ستمبر کو ملک بھر کے سرکاری دفاتر کو تالے لگا کر احتجاجی کیا جائے گا جبکہ چھ اکتوبر کو اسلام آباد میں دھرنا دیائے گا۔ ان خیالات کا اظہار انہو ں نے آل لوکل گورنمنٹ ایمپلائز گزینڈ الائنس کے ضلع چارسدہ میں اجلاس سے خطاب کے دوران کیا۔ اجلاس میں لوکل گورنمنٹ ایمپلائز فیڈریشن کے جنرل سیکرٹری شاد خان، صوبائی صدر ایپکا سجادیوسفزئی، صدر ملگری استاذان سیف اللہ، صوبائی چیئر مین ایس ایس ٹی حبیب اللہ نشیمن،ضلعی صدر درجہ چہارم ملک سیار تنظیم اساتذہ کے صابر جان، آل پرائمری ٹیچر ایسوسی ایشن کے صدر محمد شاہ صافی، صدر پیرامیڈیکل غریب جان، اپٹا کے صوبائی صدر ارشد جان اور جنرل سیکرٹری مطیع اللہ سمیت دیگر محکموں کے قائدین نے کثیر تعدا د میں شرکت کی۔ اجلاس میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ مرکزی و صوبائی قائدین کی کال پر 24 ستمبر کو دیگر اضلاع کی طرح ضلع چارسدہ میں بھی تمام سرکاری محکموں کی تالہ بندی کی جائے گی اور فاروق اعظم چوک میں بڑا احتجاجی مظاہرہکیاجائیگا۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی صدر سید فضل غفار باچا، صوبائی چیئر مین اسلام الدین، ضلعی صدر حاجی ہدایت اللہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ حکومت نے سرکاری ملازمین کیساتھ سوتیلی ماہ جیسی سلوک روا رکھا ہے اور سالانہ بجٹ میں پہلی دفعہ انکے تنخواہوں میں اضافہ نہیں کیا گیا جو ظلم اور زیادتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے  تمام سرکاری ملازمین نے موجودہ حکومت دے اپنی جائز حقوق کیلئے احتجاجی تحریک کا آغاز کردیا ہے اس سلسلے میں متفقہ فیصلہ کے مطابق 24 ستمبر کو پورے ملک سمیت ضلع چارسدہ میں بھی سرکاری ملازمین قلم چھوڑ ہڑتال کریگی اوراس سلسلے میں 6 اکتوبر کو اسلام آباد میں حکومت کے خلاف ایک بڑا احتجاجی مظاہرہ کیا جائے گا۔اجلاس سے خطاب کے دوران مقررین حکومت سے فوری طور پر سرکاری ملازمین کی تنخواہوں اور پینشن میں سو فی صد اضافہ کرنے،ملازمین کو بلاتفرق جدید ٹائم سکیل دینے،تمام ملازمین کو یکساں سکیل اور مراعات دینے،ایڈہاک ازم اور کنٹریکٹ پالیسی ختم کرنے،تمام ایڈہاک ریلیف بنیادی تنخواہوں میں ضم کرنے اور میڈیکل الاونس دس ہزار روپے ماہانہ کرنے سمیت  سرکاری ملازمین پر آئی ایم ایف کا اثر رسوخ فوری ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔اس موقع پر مقررین نے مزید کہا کہ موجودہ حکومت کا ملازمین کیساتھ ناروا رویہ قابل مذمت ہے ہم نے ہر دور حکومت میں اپنی حقوق کیلئے کامیاب جدوجہد کی ہے اور اس بار بھی سرکاری ملازمین کے بنیادی حقوق کے لئے کسی قسم کی قربانی سے دریغ نہیں کرینگے۔مقررین نے ملازمین کو اتفاق واتحاد کا درس دیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -