یک طرفہ احتساب ان کو نظر آتا ہے، جن کی آنکھوں پر پٹی ہے: جسٹس (ر) جاوید اقبال 

  یک طرفہ احتساب ان کو نظر آتا ہے، جن کی آنکھوں پر پٹی ہے: جسٹس (ر) جاوید اقبال 

  

 اسلام آباد (سٹاف رپورٹر، ما نیٹرنگ ڈیسک) چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ یک طرفہ احتساب ان کو نظرآتا ہے جن کی آنکھوں پر پٹی ہے، کبھی کسی بے گناہ کے خلاف مقدمہ یا ریفرنس تیار نہیں کیا، کسی نے دھیلے کی نہیں کروڑوں، اربوں کی کریشن کی۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین نیب جاوید اقبال کا کہنا تھا نیب شفاف احتساب کے عمل پر یقین رکھتا ہے، عوامی شکایات کے ازالے کیلئے کوشاں ہیں، نیب شفاف اور یکساں احتساب کی پالیسی پر عمل پیرا ہے، سب کی عزت نفس کا خیال رکھا جائے، بطور چیئرمین نیب شہنشاہ نہیں ہوں، قدرت کا نظام ہے، آپ جو بوتے ہیں وہی کاٹتے ہیں۔جاوید اقبال نے کہا نیب راولپنڈی کی کارکردگی کو سراہتا ہوں، عرفان منگی صاحب نے بہترین کارکردگی دکھائی، کامیابیوں کا کریڈٹ نائب قاصد سے چیئرمین تک سب کو جاتا ہے، مضاربہ کیس میں متاثرین کو رقوم کی واپسی جاری ہے، ہر ماہ کی آخری جمعرات کو سائلین سے ملاقات کا سلسلہ شروع کیا۔چیئرمین نیب نے مزید کہا کبھی کسی بے گناہ شخص کیخلاف کارروائی نہیں کی، نیب کو کسی قسم کا کوئی استثنیٰ حاصل نہیں، کہا جاتا ہے احتساب یک طرفہ ہے، یکطرفہ احتساب انہیں نظر ا?تا ہے جن کی آنکھوں پر تعصب کی پٹی ہے، قانون پڑھے بغیر تنقید کرنیوالوں پر افسوس ہے، نیب نے کبھی تنقید کا برا نہیں مانا۔جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا تھا چند دن پہلے ایک بڑے سیاستدان نے مناظرے کا چیلنج کیا، انہوں نے کہا نیب تو اپنی ناک سے مکھی نہیں اڑا سکتا، نیب نے کبھی ناک پر مکھی بیٹھنے کی اجازت ہی نہیں دی۔

چیئرمین نیب

مزید :

صفحہ اول -