شبِ فراق یہ احساس کا بلا کا ہے | اعتبار ساجد|

شبِ فراق یہ احساس کا بلا کا ہے | اعتبار ساجد|
شبِ فراق یہ احساس کا بلا کا ہے | اعتبار ساجد|

  

شبِ فراق یہ احساس کا بلا کا ہے

کہ دل چراغ ہے اور سامنا ہوا کا ہے

سبھی ہیں نوحہ بلب کون کس کا دُکھ بانٹے

یہاں تو جو بھی ہے اِک مرثیہ وفا کا ہے

اسے تو خیر سے بے حد ہے شوقِ  بخیہ گری

مگر سوال مرے زخم کی انا کا ہے

درِ قبول کو ضد ہے اُدھر ، کہ بند رہے

مگر یہاں بھی کسے حوصلہ دُعا کا ہے

طبیبِ دل ہے مگر حالِ دل سے بیگانہ

عجیب حال مرے درد آشنا کا ہے

چراغِ جان ہے سلامت تو خیریت جانو

کہ شب سفر کی ہے اور دشتِ کربلا کا ہے

میں خوشبوؤں کا پیمبر ضرور ہوں ساجد

مگر معاملہ اس شہرِ بے فضا کا ہے

شاعر: اعتبار ساجد

(شعری مجموعہ: پذیرائی، سالِ اشاعت، 1987)

Shab -e- Faraq    Yeh    Ehsaas    Kiss   Balaa   Ka   Hay

Keh   Dil   Charaagh    Hay   Aor    Saamna    Hawaa   Ka   Hay

Sabhi    Hen    Noha    Balab    Kon    Kiss    Ka   Dukh   Baantay

Yahaan   To   Jo    Bhi   Hay   Ik   Marsiya   Wafa    Ka   Hay

Usay   To    Khir    Say   Behadd   Hay   Saoq -e- Bakhya   Gari

Magar    Sawaal    Miray    Zakhm    Ki    Anaa    Ka   Hay

Dar e-e - Qubool    Ko    Zidd    Hay    Udhar   ,   Keh   Band   Rahay

Magar    Yahaan    Bhi    Kisay    Hosla    Dua    Ka  Hay

Tabeeb -e Dil    Hay    Magar    Haal -e- Dil    Say    Begaana

Ajeeb    Haal    Miray    Dard    Aashna    Ka    Hay

Charaagh -e- Jaan    Hay    Salaamat   To   Khireat   Jaano

Keh    Shab    Safar    Ki    Hay   Aor    Dasht    Karbala    Ka   Hay

Main    Khusbuon   Ka   Paiambar    Zaroor    Hunm   SAJID

Magar   Muaamla    Iss    Shehr -e- Be    Faza    Ka    Hay

Poet: Aitbar  Sajid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -