کہ عمر بھر اسے روئیں وہ یار ایسا تھا | اعتبار ساجد|

کہ عمر بھر اسے روئیں وہ یار ایسا تھا | اعتبار ساجد|
کہ عمر بھر اسے روئیں وہ یار ایسا تھا | اعتبار ساجد|

  

وہ رنج ، وہ غمِ بے اعتبار ایسا تھا

کہ عمر بھر اسے روئیں وہ یار ایسا  تھا

تمام رات سلگتا رہا رگوں میں لہو

چراغ بجھتے ہی دل سوگوار ایسا تھا

شباہتین تھیں مرے رفتگاں کی جس میں تمام

نفس نفس وہ محبت شعار ایسا تھا

بھرآئے دل تو اسی کو نگاہ ڈھونڈتی تھی

تمام شہر میں وہ غمگسار ایسا تھا

سلگتی ریت پہ بارش کی جیسے ریت گرے

دُکھی دِلوں کے لیے اس کا پیار ایسا تھا

مہکنے لگتے تھے ذہنوں میں اس کی چاپ سے پھول

وہ حبسِ جاں میں نسیمِ بہار یسا تھا

پلک جھپکنے میں یہ سانحہ گزر بھی گیا

کبھی گماں بھی کسے اعتبار ایسا تھا

شاعر: اعتبار ساجد

(شعری مجموعہ: پذیرائی، سالِ اشاعت، 1987)

Wo    Ranj  ,   Wo Gham -e- Be  Ikhtayaar    Aisa  Tha

  Kej    Umr   Bhar   Usay   Roen ,  Wo    Yaar   Aisa  Tha

Tamaan    Raat    Sulagta    Raha   Ragon   Men   Lahu

Charaagh    Bujhtay   Hi   Dil    Sogwaar   Aisa   Tha

Shabaahten   Then    Miray    Raftgaan    Ki   Jiss    Men   Tamaam

Nafas   Nafas    Wo    Muhaabbat    Sheaar    Aisa   Tha

Bhar   Aaey   Dil   To   Usi   Ko   Nigaah   Dhoondti   Thi

Tamaam   Shehr    Men   Wo   Ghamgusaar   Aisa  Tha

Sulagti    Rait   Pe   Baarish   Ki    Jaisay    Boond   Giray

Dukhi   Dilon    K    Liay    Uss   K   Payaar   Aisa   Tha

Mahaknay    Lagtay    Thay    Zehnon   Men   Uss   Ki   Chaap   Say   Phool

Wo    Subh e-e- Jaan    Mennaseem -e- Bahaar   Aisa   Tha

Palak    Jhapktay   Men   Yeh    Saaniha   Guzar   Bhi    Gaya

Kabhi    Gumaan    Bhi    Kisay   AITBAR    Aisa   Tha

Poet: Aitbar   Sajid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -