کوئی تدبیر کرو، پھول کھلے رہ جائیں | اعتبار ساجد|

کوئی تدبیر کرو، پھول کھلے رہ جائیں | اعتبار ساجد|

  

رُت کی بے مہر ہواؤں سے بچے رہ جائیں

کوئی تدبیر کرو، پھول کھلے رہ جائیں

کیا خبر لوٹ کے آئیں نہ مسافر ترے

رات ڈھل جائے یہ دروازے کھلے رہ جائیں

صبح آئے تو مرا دستِ ہنر شل ہو جائے

ان کہی نظم کے اشعار دھرے رہ جائیں

شہرِ جاناں مری رودادِ محبت پڑھ نہ سکے

ریت پر میرے سب اوراق پڑے رہ جائیں

عین ممکن ہے جو ، اب طوقِ گلو تک لے جاؤں

میری گردن پہ مرے ہاتھ جمے رہ جائیں

منتظر ہی رہیں دالان کی بیلیں ساجد

گھر کے بام و در و دیوار سجے رہ جائیں

شاعر: اعتبار ساجد

(شعری مجموعہ: پذیرائی، سالِ اشاعت، 1987)

Rut    Ki   Be   Mehr   Hawaaon    Say   Bachay   Reh   Jaaen

Koi  Tadbeer   Karo ,  Phool   Khilay   Reh   Jaaen

Kaya   Kahabr   Laot   K  Aaen  Na  Musaafir  Tiray

Raat   Dhall   Jaaey ,  Yeh  Darwaazay   Khulay   Reh   Jaaen

Subh   Aaey   To    Mira   Dast -e- Hunar   Shall   Ho   Jaaey

An   Kahi   Nazm   K   Ashaar   Dharay   Reh   Jaaen

Sheh r-e- Jaana   Miri   Rudaad-e- Safar    Parrh   Na   Sakay

Rait    Par   Meray   Sab   Aoraaq   Parray   Reh   Jaaen

Ain   Mumkin    Hay   Jo   Ab  Toq -e- Gulu Tak   Jaaun

Meri   Gardan   Pe    Miray   Haath   Jamay   Reh   Jaaen

Muntazir   Hi   Rahen   Dalaan   Ki   Bailen   SAJID

Ghar   K   Baam -o- Dar-o- Dewaar   Sajay   Reh   Jaaen

Poet: Aitbar    Sajid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -