ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا  | افتخارعارف |

ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا  | افتخارعارف |
ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا  | افتخارعارف |

  

ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا 

ہمارے بعد تم کو یہ جہاں کیسا لگے گا 

تھکے ہارے ہوئے سورج کی بھیگی روشنی میں 

ہواؤں سے الجھتا بادباں کیسا لگے گا 

جمے قدموں کے نیچے سے پھسلتی جائے گی ریت 

بکھر جائے گی جب عمر رواں کیسا لگے گا 

اسی مٹی میں مل جائے گی پونجی عمر بھر کی 

گرے گی جس گھڑی دیوار جاں کیسا لگے گا 

بہت اترا رہے ہو دل کی بازی جیتنے پر 

زیاں بعد از زیاں بعد از زیاں کیسا لگے گا 

وہ جس کے بعد ہوگی اک مسلسل بے نیازی 

گھڑی بھر کا وہ سب شور و فغاں کیسا لگے گا 

ابھی سے کیا بتائیں مرگ مجنوں کی خبر پر 

سلوک کوچۂ نا مہرباں کیسا لگے گا 

بتاؤ تو سہی اے جان جاں کیسا لگے گا 

ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا 

شاعر: افتخار عارف

(شعری مجموعہ:جہانِ معلوم، سالِ اشاعت، 2005)

Sitaaron   Say   Bhara   Yeh   Aasmaan   Kaisa   Lagay   Ga

Hamaaray   Baad   Tum   Ko   Yeh    Jahaan    Kaisa   Lagay   Ga

Thakay  Haray   Huay   Sooraj   Ki   Bheegi   Roshni   Men

Hawaaon   Say   Ulajhta    Baadbaan    Kaisa   Lagay   Ga

Jamay   Qadmon   K   Neechay   Say   Phisalti    Jaey   Gi   Rait

Bikhar   Jaaey   Gi   Jab   Umr-e- Rawaan    Kaisa   Lagay   Ga

Isi   Matti   Men   Mill   Jaaey   Gi   Poonji   Umr   Bhar   Ki

Giray   Gi   Jiss   Gharri   Dewaar-e- Jaan    Kaisa   Lagay   Ga

Bahut  Itra   Rahay   Ho   Dil   Ki   Baazi   Jeetnay   Par

Ziyaan   Baad   Az   Ziyaan    Kaisa   Lagay   Ga

Wo   Jiss   K   Baad   Ho   Gi   Ik   Musalsal   Be   Nayazi

Gharri   Bhar   Ka   Wo   Sab   Shor -o- Fughaan   Kaisa   Lagay   Ga

Abhbi   Say   Kaya   Btaaen   Marg -e- Majnun   Ki   Khabar   Par

Sulook -e- Koocha -e- Na   Mehrbaan   Kaisa   Lagay   Ga

Bataao   To   Sahi   Ay   Jaan -e- Jaan    Kaisa   Lahgay   Ga

Sitaaron   Say   Bhara   Yeh   Jahaan   Kaisa   Lagay   Ga

Poet: Iftikhar Arif

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -