بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا  | افتخارعارف |

بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا  | افتخارعارف |
بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا  | افتخارعارف |

  

بکھر جائیں گے ہم کیا جب تماشا ختم ہوگا 

مرے معبود آخر کب تماشا ختم ہوگا 

چراغ حجرۂ درویش کی بجھتی ہوئی لو 

ہوا سے کہہ گئی ہے اب تماشا ختم ہوگا 

کہانی میں نئے کردار شامل ہو گئے ہیں 

نہیں معلوم اب کس ڈھب تماشا ختم ہوگا 

کہانی آپ الجھی ہے کہ الجھائی گئی ہے 

یہ عقدہ تب کھلے گا جب تماشا ختم ہوگا 

زمیں جب عدل سے بھر جائے گی نور علیٰ نور 

بنام مسلک و مذہب تماشا ختم ہوگا 

یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات 

سحر سے پہلے پہلے سب تماشا ختم ہوگا 

تماشا کرنے والوں کو خبر دی جا چکی ہے 

کہ پردہ کب گرے گا کب تماشا ختم ہوگا 

دل نا مطمئن ایسا بھی کیا مایوس رہنا 

جو خلق اٹھی تو سب کرتب تماشا ختم ہوگا 

شاعر:افتخار عارف

(شعری مجموعہ:جہانِ معلوم، سالِ اشاعت، 2005)

Bikhar   Jaeen    Gay   Ham   Kaya   Jab   Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Miray   Mahbood   Aakhir   Kab   Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Charaagh -e- Hujra -e- Darvesh    Ki    Bujhti    Hui   Lao

Hawa   Say   Keh   Rahi   Hay   Ab   Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Kahaani    Men   Naey   Kirdar   Shaamil   Ho   Gaey   Hen

Nahen   Maloom   Ab   Kiss   Dhab  Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Kahaani    Aap   Uljhi   Hay   Keh   Uljhaai   Gai    Hay

Yeh   Uqda   Tab   Khulay   Ga   Jab  Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Zameen    Jab   Adl   Say   Bhar    Jaaey    Gi    Noor    Alaa   Noor

Ba  Naam -e- Maslak -o-Mazhab   Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Yeh   Sab   Kath    Putliyaan   Raqsaan    Rahen    Gi   Raat   Ki   Raat

Sahar   Say   Pehlay   Pehlay   Sab   Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Tamaasha   Karnay   Waalon   Ko   Khabar   Di   Ja   Chuki   Hay

Keh   Parda   Kab   Giray   Ga , Kab   Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Dil -e- Na   Mutmain   Aisa   Bhi   Kaya   Mayoos   Rehna

Jo   Khalq   Uthi   To   Sab   Kartab  Tamaasha   Khatm   Ho   Ga

Poet: Iftikhar Arif

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -