ہمیں خبر تھی کہ یہ درد اب تھمے گا نہیں | افتخارعارف |

ہمیں خبر تھی کہ یہ درد اب تھمے گا نہیں | افتخارعارف |
ہمیں خبر تھی کہ یہ درد اب تھمے گا نہیں | افتخارعارف |

  

ہمیں خبر تھی کہ یہ درد اب تھمے گا نہیں

یہ دل کا ساتھ بہت دیر تک رہے گا نہیں

ہمیں خبر تھی کوئی آنکھ نم نہیں ہو گی

ہمارے غم میں کہیں کوئی دل دکھے گا نہیں

ہمیں خبر تھی کہ اک روز یہ بھی ہونا ہے

کہ ہم کلام کریں گے کوئی سنے گا نہیں

ہماری دربدری جانتی تھی برسوں سے

گھر آئیں گے بھی تو کوئی پناہ دے گا نہیں

ہماری طرح نہ آئے گا کوئی نرغے میں

ہماری طرح کوئی قافلہ لٹے گا نہیں

نمودِ خواب کی باتیں شکستِ خواب کا ذکر

ہمارے بعد یہ قصے کوئی کہے گا نہیں

غریب شہر ہو یا شہر یارِ ہفت اقلیم

یہ وقت ہے، یہ کسی کے لیے رکے گا نہیں

مگر چراغِ ہنر کا معاملہ ہے کچھ اور

یہ ایک بار جلا ہے تو اب بجھے گا نہیں

شاعر: افتخار عارف

(شعری مجموعہ:جہانِ معلوم، سالِ اشاعت، 2005)

Hamen   Khabar   Thi   Keh   Yeh   Dard   Ab   Thamay   Ga   Nahen

Yeh    Dil   Ka   Saath   Bahut   Der   Tak   Rahay   Ga   Nahen

Hamen    Khabar    Thi    Koi    Aankh   Nam   Nahen   Ho   Gi

Hamaaray   Gham   Men    Kahen   Koi   Dil   Dukhay   Ga   Nahen

Hamen   Khabar   Thi   Ik   Roz   Yeh   Bhi   Hona   Hay

Keh   Ham   Kalaam   Karen   Gay   Koi   Sunay    Ga   Nahen

Hamaari    Darbadari    Jaanti   Thi    Brson   Say

Ghar    Aaen    Gay   Bhi   To   Koi   Panaah   Day   Ga   Nahen

Hamaari    Tarah     Na    Aaey    Ga     Koi    Narghay   Men

Hamaari    Tarah    Koi    Qaafila    Lutay  Ga   Nahen

Namood -e- Khaab    Ki    Baaten   ,    Shikast-e- Khaab    Ka   Zikr

Hamaaray    Baad    Yeh    Qissay    Koi     Kahay  Ga   Nahen

Ghareeb -e- Shehr   Ho Ya    Shehr -e- Yaar -e- Haft    Aqleem

Yeh    Waqt    Hay    Yeh    Kisi    K    Liay    Rukay Ga   Nahen

Magar    Charaagh -e- Hunar    Ka    Muaamla   Hay    Kuch    Aor

Yeh   Aik     Baar    Jala    Hay   To   Ab    Bujhay     Ga   Nahen

Poet: Iftikhar Arif

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -