یہ بستیاں ہیں کہ مقتل دعا کیے جائیں  | افتخارعارف |

یہ بستیاں ہیں کہ مقتل دعا کیے جائیں  | افتخارعارف |

  

یہ بستیاں ہیں کہ مقتل دعا کیے جائیں 

دعا کے دن ہیں مسلسل دعا کیے جائیں 

کوئی فغاں کوئی نالہ کوئی بکا کوئی بین 

کھلے گا باب مقفل دعا کیے جائیں 

یہ اضطراب یہ لمبا سفر یہ تنہائی 

یہ رات اور یہ جنگل دعا کیے جائیں 

بحال ہو کے رہے گی فضائے خطۂ خیر 

یہ حبس ہوگا معطل دعا کیے جائیں 

گزشتگان محبت کے خواب کی سوگند 

وہ خواب ہوگا مکمل دعا کیے جائیں 

ہوائے سرکش و سفاک کے مقابل بھی 

یہ دل بجھیں گے نہ مشعل دعا کیے جائیں 

غبار اڑاتی جھلستی ہوئی زمینوں پر 

امنڈ کے آئیں گے بادل دعا کیے جائیں 

قبول ہونا مقدر ہے حرف خالص کا 

ہر ایک آن ہر اک پل دعا کیے جائیں 

شاعر:افتخار عارف

(شعری مجموعہ:جہانِ معلوم، سالِ اشاعت، 2005)

Yeh   Bastiyaan   Hen   Keh   Maqtal   Dua   Kiay   Jaaen

Dua   K   Din   Hen   Musalsal   Dua   Kiay   Jaaen

Koi   Naala  ,  Koi   Fughaan  ,   Koi    Bukaa  ,  Koi Bain

Khulay    Ga     Baab-e- Muqaffal    Dua     Kiay   Jaaen

Yeh     Iztaraab   ,   Yeh    Lamba     Safar  ,    Yeh    Tanhaai

Yeh    Raat    Aor    Yeh    Jangal  ,   Dua    Kiay   Jaaen

Bahaal    Ho    K     Rahay    Gi     Fazaa -e- Khitta -e- Khair

Yeh    Habs    Ho    Ga    Muattal    Dua    Kiay   Jaaen

Guzashtgaan -e- Muhabbat     K    Khaab    Ki    Sogand

Wo    Khaab    Ho    Ga    Mukammal    Dua    Kiay    Jaaen

Hawaa-e- Sarkash -o- Saffaak   K    Muqaabil    Bhi

Yeh    Dil    Bujhen    Gay    Na    Mashal    Dua    Kiay    Jaaen

Ghubaar    Urrti  ,    Jhulasti    Hui    Zameeno    Par

Umand    K    Aaen    Gay    Baadal    Dua    Kiay    Jaaen

Qabool    Hona    Muqaddar    Hay    Harf -e- Khaalis    Ka

Har    Aik    Aan    Har    Aik   Pall    Dua    Kiay    Jaaen

Poet: Iftikhar Arif

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -